Friday, May 20, 2022

یوکرین کا روسی سرزمین پر حملہ، ایک آئل ڈپو تباہ

یوکرین کا روسی سرزمین پر حملہ، ایک آئل ڈپو تباہ
April 2, 2022 ویب ڈیسک

کیف (92 نیوز) - یوکرین نے روسی سرزمین پر حملہ کر کے ایک آئل ڈپو تباہ کر دیا۔

روس میں تیل ڈپو پر حملے کے بعد یوکرین میں جنگ بندی کا عارضی معاہدہ ٹوٹ گیا۔ روس کے مطابق یوکرین کے ہیلی کاپٹروں نے اس کے تیل کے ڈپو کو نشانہ بنایا تاہم یوکرینی حکام نے حملے کی تردید کرتے ہوئے الزام لگایا ہے کہ روس نئے حملوں کے بہانے تلاش کر رہا ہے۔

تیل کے ڈپو پر حملے کے بعد روسی فوج کی طرف سے یوکرین میں کارروائیاں دوبارہ سے شروع کر دی گئی ہے۔ دارالحکومت کیف اور ماریوپول میں شدید جھڑپوں کی اطلاعات ہیں۔ یوکرینی حکام نے دعویٰ کیا ہے کہ اس کی فوج نے روس کو کیف سے پیچھے دھکیل دیا ہے جبکہ شمالی اور مغربی علاقوں پر دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

ریڈ کراس نے شدید لڑائی کے باعث ماریوپول سے شہریوں کے انخلا کا آپریشن معطل کر دیا ہے۔ ریڈکراس کے مطابق فریقین کو انسانی جانوں کی کوئی پرواہ نہیں۔ اس صورتحال میں محصور لوگوں تک امداد پہنچانا مشکل ہے۔ اقوام متحدہ کا ایک اعلیٰ عہدیدار جنگ بندی کیلئے کل روس جائے گا۔

امریکا نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ روس یوکرین کے خلاف کیمیائی ہتھیار استعمال کر سکتا ہے۔ ترجمان وائٹ ہاؤس جین ساکی کے مطابق امریکا ممکنہ کیمیائی حملوں سے بچاؤ کیلئے یوکرین کو سامان فراہم کر رہا ہے۔

دوسری طرف روس اور یوکرین کے درمیان آن لائن مذاکرات کا آغاز ہو گیا ہے۔ یوکرین کے صدارتی دفتر نے بھی مذاکرات کی تصدیق کی ہے۔ ترک صدر بھی روسی اور یوکرینی صدور کی براہ راست ملاقات کرانے کی کوششوں میں مصروف ہیں۔ اس حوالے سے ادوان نے روسی صدر سے ٹیلیفونک رابطہ بھی کیا۔

 ادھر یوکرینی پارلیمنٹ نے روس کی سرکاری املاک قومیانے کا قانون منظور کر لیا۔ قانون کے تحت یہ قانون روسی آپریشن کی حمایت کرنے والے شہریوں پر بھی لاگو ہو گا۔ 450 میں سے 305 ارکان نے قانون کے حق میں ووٹ دیا۔

 دوسری طرف یورپی کمیشن کی طرف سے روبل میں گیس کی ادائیگی سے انکار کے بعد روس صدر نے روبل میں ادائیگی کا فیصلہ 2 ماہ کیلئے موخر کرنے کا عندیہ دے دیا جبکہ روسی گیس کمپنی گیز پروم نے جرمنی میں کاروبار ختم کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔