Friday, August 12, 2022

یاسین ملک کی غیرقانونی سزا پر انکی اہلیہ مشعال ملک نے نریندرمودی کو خط لکھ دیا

یاسین ملک کی غیرقانونی سزا پر انکی اہلیہ مشعال ملک نے نریندرمودی کو خط لکھ دیا
July 30, 2022 ویب ڈیسک

سرینگر (کے ایم ایس) - حریت رہنما یاسین ملک کی غیرقانونی سزا پر انکی اہلیہ مشعال ملک نے نریندرمودی کو خط لکھ دیا۔

” پیس اینڈ کلچر آرگنائزیشن“ (پی سی او) کی چیئرپرسن مشعال حسین ملک نے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے نام ایک خط میں ان پر زور دیا ہے کہ وہ انکے شوہر اور کشمیری حریت رہنما محمد یاسین کو فوری رہا کر کے ان کی خرابی صحت کے حوالے سے بڑائی اور انصاف پسندی کا جذبہ دکھائیں۔

کشمیر میڈیا سروس کے مطابق مشعال ملک نے لکھا کہ لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک جو جموں و کشمیر کے سب سے طاقتور پرامن رہنماوں میں سے ایک ہیں، اس وقت دہلی کی تہاڑ جیل میں قید تنہائی میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یاسین ملک انصاف اور منصفانہ ٹرائل کے انکار کے خلاف 22 جولائی سے تادم مرگ بھوک ہڑتال پر ہیں۔

مشعال نے لکھا کہ برسوں کی قید، اذیتوں اور متعدد بیماریوں کی وجہ سے ان کی صحت کی تیزی سے بگڑتی ہوئی حالت کیوجہ سے یاسین ملک کو دہلی کے ایک اسپتال میں منتقل کیا گیا ہے جہاں وہ زندگی کی جنگ لڑ رہے ہیں۔ انہوں نے لکھا کہ میرے شوہر نے عدالت کو مطلع کیا تھا کہ انہوں نے ریاست بھارت کو ایک عرضی بھیجی تھی جس میں عدالتی ٹرائلز میں انہیں ذاتی طور پر پیش کرنے اور منصفانہ ٹرائل کی درخواست کی گئی تھی لیکن بدقسمتی سے ان کی درخواست پر غور نہیں کیا گیا لہذا بھارتی حکومت کی طرف سے کوئی جواب نہ ملنے کی وجہ سے ان کے پاس کوئی قانونی چارہ نہیں رہ گیا اور انہوں نے بالآخر 22 جولائی 2022 سے بھوک ہڑتال کرنے کا فیصلہ کیا۔

مشعال نے خط میں لکھا کہ میں آپ( نریندر مودی) سے درخواست کرتی ہوں کہ وہ اس معاملے میں فوری طور پر ذاتی دلچسپی لیں اور یاسین ملک کی نازک صحت کی حالت کے تئیں بڑائی اور انصاف پسندی کا مظاہرہ کریں۔ یاسین ملک تین دہائیوں سے جموں و کشمیر کے عوام کے لیے تمام بین الاقوامی اصولوں، معاہدوں، جنیوا کنونشنز، اقوام متحدہ کی قراردادوں کی پاسداری کرتے ہوئے مسئلہ کشمیر کے پرامن حل کے لیے دن رات جدوجہد کر رہے ہیں۔

انہوں نے لکھا کہ ماضی میں بھارتی حکومت اس حوالے سے یاسین ملک کیساتھ بات چیت بھی کرتی رہی ہے ۔ یاسین ملک چاہتے ہیں کہ ان کی سرزمین کے لوگ امن، ہم آہنگی اور آزادی کے ساتھ رہیں اور وہ اسی مقصد کیلئے جدوجہد کر رہے ہیں۔ انہوں نے مزید لکھا کہ چونکہ یاسین ملک عدم تشدد کی جدوجہد اور تنازعہ کشمیر کے پر حل پر یقین رکھتے ہیں لہذا اگر دوران حراست ان کے ساتھ کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش آیا تو اسکی ذمہ بھارتی ریاست ہو گی۔

دریں اثنا، پاکستان نے بھارتی ناظم الامور کو وزارت خارجہ میں طلب کرکے یاسین ملک کی صحت کی تیزی سے بگڑتی ہوئی حالت پر سخت احتجاج کیا۔ اسلام آباد میں دفتر خارجہ کے ایک بیان میں کہا گیا کہ اس موقع پر بھارتی وزیر اعظم نریندرمودی کے نام مشعال ملک کا تحریر کروہ مکتوب بھی ناظلم الامور کے حوالے کیا گیا۔