Monday, October 3, 2022

وزیر اعظم کی الیکشن کمیشن کے نوٹس پر کارروائی روکنے کی استدعا مسترد

وزیر اعظم کی الیکشن کمیشن کے نوٹس پر کارروائی روکنے کی استدعا مسترد
March 18, 2022 ویب ڈیسک

اسلام آباد (92 نیوز) - اسلام آباد ہائی کورٹ نے وزیر اعظم عمران خان کی الیکشن کمیشن کے نوٹس پر کارروائی روکنے کی استدعا مسترد کر دی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس عامر فاروق نے وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے الیکشن کمیشن کے نوٹس کو چیلنج کرنے سے متعلق کیس کی سماعت کی ۔ وزیر اعظم کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ الیکشن کمیشن کا کوڈ آف کنڈکٹ قانون سے بالا نہیں ہو سکتا۔ سیاسی جماعتوں کے لئیے بنایا گیا الیکشن کمیشن کا ضابطہ اخلاق پارلیمنٹ کے منظور کردہ قانون کو رد نہیں کر سکتا۔

جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیئے کہ کوئی بھی آئینی اختیار قانون بنا کر ختم نہیں کیا جا سکتا۔ معذرت کے ساتھ حکومت نے بھی آرڈیننس کی فیکٹری لگائی ہوئی ہے۔

بیرسٹر علی ظفر نے عدالت سے استدعا کی کہ کوڈ آف کنڈکٹ کی خلاف ورزی پر وزیر اعظم کو الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری نوٹس معطل کیا جائے ۔ جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیئے کہ  ہر کوئی اداروں کی دائرہ اختیار کو چیلنج کرے تو کیا بنے گا۔ آپ کے موکل  کا کنڈکٹ مناسب نہیں، انہیں الیکشن کمیشن میں پیش ہونا چاہئے تھا۔ ہم نوٹس جاری کر رہے ہیں، حکم امتناع نہیں دیا جا سکتا۔

عدالت نے ریمارکس دیئے کہ الیکشن کمیشن کا اختیار تھا یا نہیں، کیا کوئی شخص خود فیصلہ کرے گا ؟الیکشن کمیشن کو سنے بغیر سٹے آرڈر نہیں دے سکتے۔ اسلام آباد ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن اور سیکرٹری کابینہ کو نوٹس جاری کرتے ہوئے  28 مارچ کو جواب طلب کر لیا۔