Wednesday, September 28, 2022

سندھ کےعلاقوں میں 1100 ملی میٹر تک بارش ہو چکی

سندھ کےعلاقوں میں 1100 ملی میٹر تک بارش ہو چکی
August 26, 2022 ویب ڈیسک

کراچی (92 نیوز) - سندھ کے علاقوں میں 1100 ملی میٹر تک بارش ہو چکی ہے۔ پورا سندھ دریا کا منظرپیش کرنے لگا۔

سندھ میں سیلابی صورتحال المیے کو جنم دینے لگی ہے۔ ضلع دادو میں پورے جوہی شہر کو خالی کرنے کا نوٹس دیدیا گیا ہے۔ محکمہ انہار نے میہڑ کے این شاہ اور جوہی شہروں کو انتہائی حساس قرار دیدیا ہے۔ حمل جھیل اور فریدآباد ایف پی بند پر بڑا شگاف پڑ گیا ہے۔

پانی کا بہائو میہڑ کے این شاہ اور جوہی کی طرف تیزی سے بڑھ رہا ہے۔ جوہی شہر کی آبادی ایک لاکھ سے زائد ہے۔ تیس ہزار آبادی پہلے ہی نقل مکانی کر چکی ہے۔

حیدرآباد کی بات کریں تو یہاں پانی کی نکاسی انتظامیہ کیلئے چیلنج بن گیا ہے۔ شہر کے نشیبی علاقے تیسرے روز بھی برساتی پانی میں ڈوبے ہوئے ہیں۔ معمولات زندگی مفلوج ،پانی لوگوں کے گھروں میں موجود ہے۔

سکھر بیراج پر اونچے درجے کے سیلاب نے کچے کے علاقے میں تباہی مچا دی ہے۔ ہزاروں افراد نقل مکانی کر گئے ہیں۔ کھر شہر کا بھی براحال ہے، پانی کی نکاسی نہ ہونے کے باعث شہری شدید پریشان ہیں۔

دوسری جانب میرپورخاص اور جیکب آباد بھی بارش سے شدید متاثر ہیں۔ میرپورخاص کے اسپتال تک پانی سے بھرے ہوئے ہیں۔ بستیوں کی بستیاں زیر آب ہیں جبکہ جیکب آباد  میں برساتی پانی جانیں نگلنے لگا ہے۔ تحصیل گڑھی یاسیں میں گھروں کی چھتیں گرنے کے مختلف واقعات میں پانچ افراد جاں بحق اور دو زخمی ہو گئے ہیں۔