Thursday, February 22, 2024

لیجنڈری بلے باز جاوید میانداد پی سی بی ہال آف فیم میں شامل

لیجنڈری بلے باز جاوید میانداد پی سی بی ہال آف فیم میں شامل
March 19, 2022 ویب ڈیسک

کراچی (92 نیوز) - پاکستان کے لیجنڈری بلے باز جاوید میانداد پی سی بی ہال آف فیم میں شامل کرلیے گئے۔

پی سی بی نے جاوید میانداد کوباقاعدہ طور پر ہال آ فیم میں شامل کر لیا۔،، چیف ایگزیکٹو پی سی بی فیصل حسنین نے جاویدمیانداد کو اعزازی پلاک اور کیپ دی۔

جاوید میانداد نے کہا "میں پی سی بی ہال آف فیم میں شامل ہونے پر عاجز اور فخر محسوس کرتا ہوں۔ یہ مناسب ہے کہ یہ شمولیتیں اس وقت ہو رہی ہیں جب ایک بین الاقوامی کرکٹر پاکستان کرکٹ کے معاملات کی سربراہی کر رہا ہے کیونکہ وہ کسی کرکٹر کی محنت اور قربانیوں کو سب سے بہتر سمجھتا ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ "جب بھی میں نے کھیل کے میدان میں قدم رکھا، میں اپنی کارکردگی کے ذریعے اپنی ٹیم اور ملک کے لیے کردار ادا کرنا چاہتا تھا۔ ایسا کرنے کے لیے، میں نے جدید طریقوں کا استعمال کرتے ہوئے اپنی تربیت اور تیاری کے منصوبے بنائے جن کا مجھے سامنا کرنا پڑے گا۔ مجھے خوشی ہے کہ میری کوششوں کے اچھے نتائج برآمد ہوئے اور میں اپنی ٹیم اور ملک کی ایسی پرفارمنس کے ساتھ خدمت کر سکا جس نے ہمیں ایک قابل فخر کرکٹ قوم بنا دیا۔

لیجنڈری بلے باز نے کہا "ایک چیز جو میں نے اپنے پورے کیرئیر میں بڑی کامیابی کے ساتھ کی وہ یہ تھی کہ اپنی پچھلی کارکردگی کو جلدی سے بھول جانا اور اگلے چیلنج کی طرف توجہ مرکوز کرنا۔ بلاشبہ، میں نے پچھلے میچ سے سیکھا اور اگلے میچ میں بہتری لانے کی کوشش کی، لیکن میں نے پچھلے میچوں میں کیا حاصل کیا اس پر توجہ نہیں دی۔

میانداد نے کہا "میں خوش قسمت ہوں کہ ہمیشہ بہترین اور شاندار ہم عصر تھے جنہوں نے میری حمایت اور حوصلہ افزائی کی اور میں خاص طور پر پاکستانی عوام کا شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں کہ ان کی آج تک زبردست حمایت اور محبت کے لیے، یہ ہمیشہ میری حوصلہ افزائی اور فضیلت کے حصول میں محرک رہا۔"

چیف ایگزیکٹو پی سی بی فیصل حسنین نے کہا ’’ پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے، میں جاوید میانداد کو پی سی بی ہال آف فیم میں شامل ہونے پر مبارکباد دینا چاہتا ہوں۔ یہ چھوٹا سا اشارہ پاکستان کرکٹ کے لیے ان کی بے پناہ خدمات اور دنیا بھر کے کرکٹ شائقین کو بے مثال خوشی فراہم کرنے کا انعام اور اعتراف ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ جاوید میانداد نے جب بھی بیٹنگ کی تو کچھ بھی ناممکن نظر نہیں آتا تھا۔ اپنے کبھی نہ کہنے والے انداز کے لیے، میانداد نے اپنے مداحوں اور مخالفین پر ایک لازوال تاثر چھوڑا ہے جو اس کا احترام کرتے ہیں، ان کی تعریف کرتے ہیں، اِنہوں نے اپنا کیریئر وقار، فخر اور مسلسل کارکردگی کے ساتھ کھیلا۔

64 سالہ میانداد 1975- 1996 تک پاکستان کرکٹ کے دل کی دھڑکن تھے، اس دوران انہوں نے 357 میچوں میں 31 سنچریوں کی مدد سے 16,213 بین الاقوامی رنز بنائے۔ 1973-74 سے 1993-94 تک 402 میچوں کے فرسٹ کلاس کیریئر میں، میانداد نے 80 سنچریوں اور 139 نصف سنچریوں کے ساتھ 53 سے زیادہ کی اوسط سے 28,663 رنز بنائے۔

میانداد نے 1975 کا ورلڈ کپ 18 سال کی عمر میں کھیلا اور اس کے بعد وہ عمران خان کی قیادت میں آسٹریلیا میں 1992 کا ایونٹ جیت کر مزید پانچ ورلڈ کپ میں حصہ لینے گئے۔ ورلڈ کپ کے 33 میچوں میں میانداد نے 43 سے زیادہ کی اوسط سے 1,083 رنز بنائے۔

میانداد نے 1976 میں نیوزی لینڈ کے خلاف پہلے ٹیسٹ میں لاہور میں ٹیسٹ ڈیبیو پر سنچری (163) کی اننگز کھیلی اور پھر کراچی میں تیسرے ٹیسٹ میں اپنی 6 ڈبل سنچریوں میں سے پہلی (206) کی ڈبل سنچری سکور کی۔ 1989 میں لاہور میں اپنے 100 ویں ٹیسٹ میں، میانداد نے ڈیبیو اور 100 ویں ٹیسٹ میں سنچری بنانے والے دوسرے بلے باز (گورڈن گرینیج) بننے کے لیے 145 رنز بنائے۔

میانداد نے آسٹریلیا کیخلاف (25 ٹیسٹ میں 1،797)، انگلینڈ کیخلاف (22 ٹیسٹ میں 1،329)، بھارت کیخلاف (28 ٹیسٹ میں 2،228) اور نیوزی لینڈ کیخلاف (18 ٹیسٹ میں 1,919) ٹیسٹ رنز بنائے جبکہ انہوں نے آسٹریلیا کے خلاف 1,000 ون ڈے رنز بنائے، 35 میچوں میں 1,019، بھارت (35 میچوں میں 1،175)، سری لنکا (35 میچوں میں 1،141) اور ویسٹ انڈیز (64 میچوں میں 1،930)۔