Wednesday, May 18, 2022

اسلام آباد ہائیکورٹ نے پی ٹی آئی قیادت کے خلاف توہین مذہب مقدمات درج کرنے سے روک دیا

اسلام آباد ہائیکورٹ نے پی ٹی آئی قیادت کے خلاف توہین مذہب مقدمات درج کرنے سے روک دیا
May 12, 2022 ویب ڈیسک

اسلام آباد (92 نیوز) - اسلام آباد ہائیکورٹ نے پولیس کو پی ٹی آئی قیادت کے خلاف توہین مذہب مقدمات درج کرنے سے روک دیا۔

چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے سابق وزیراطلاعات فواد چوہدری کی توہین مذہب مقدمات کے خلاف دائر درخواست پر سماعت کی۔ ڈپٹی اٹارنی جنرل طیب شاہ نے اسلام آباد پولیس کی رپورٹ جمع کرائی۔ عدالت نے مسجد نبویﷺ واقعے پر درج مقدمات کیخلاف فواد چوہدری، شہباز گل اور قاسم سوری کی درخواست سمیت تمام درخواستیں یکجا کرنے کی ہدایت کر دی۔

دوران سماعت فواد چوہدری نے موقف اپنایا کہ ماضی میں بھی بہت غلطیاں ہوئیں مگرایسا کبھی نہیں ہوا۔ وزیرداخلہ نے معاشرے کو تقسیم کر دیا۔  عدالت پراعتماد نہیں ہو گا تو کس پر اعتماد ہو گا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے معاشرے میں استحکام صرف سیاسی لوگ ہی لا سکتے ہیں۔ مذہبی الزامات لگانا بہت بڑی بدقسمتی ہے۔ آئین پاکستان کی بہت بے توقیری ہو چکی ہے۔ آئین کو سپریم نہیں سمجھتے ورنہ آج ملک میں یہ حالات نہ ہوتے۔ ادارے بھی آئین کے تابع ہیں جس کے تحت ادارے جوابدہ بھی ہیں۔ سب کو آئین کی پاسداری کرنی چاہئے۔ کیا سیالکوٹ واقعے سے ریاست نے سبق نہیں سیکھا۔ یہ ریاست کی ذمہ داری ہے کہ ان معاملات کو دیکھے۔ مذہب کو سیاست میں استعمال نہیں کیا جانا چاہیے۔

عدالت نے سماعت دو ہفتے تک ملتوی کر دی۔