Monday, June 27, 2022

گستاخانہ بیانات کیخلاف احتجاج، بھارت میں مسلمانوں کے گھر مسمار

گستاخانہ بیانات کیخلاف احتجاج، بھارت میں مسلمانوں کے گھر مسمار
June 13, 2022 ویب ڈیسک

اترپردیش (92 نیوز) - گستاخانہ بیانات کے خلاف احتجاج پر بھارتی حکومت اوچھے ہتھکنڈوں پر اتر آئی۔ گستاخانہ بیانات کے خلاف احتجاج کرنے والے مسلمانوں کے گھر مسمار کر دئیے گئے۔

بھارت کی ریاست اتر پردیش میں حکام نے گزشتہ ہفتے ہونے والے فسادات میں ملوث ہونے کے الزام میں متعدد افراد کے گھروں کو مسمار کر دیا ہے جو حکمراں جماعت کی شخصیات کی طرف سے پیغمبر اسلام محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں توہین آمیز ریمارکس کی وجہ سے شروع ہوئے تھے۔

حکام نے بتایا کہ ہندوستانی کشمیر میں، پولیس نے ایک نوجوان کو حکمراں جماعت کے سابق ترجمان کا سر قلم کرنے کی دھمکی دینے والی ویڈیو پوسٹ کرنے پر گرفتار کیا جس نے کچھ تبصرے کیے تھے۔ یوٹیوب پر گردش کرنے والی اس ویڈیو کو حکام نے واپس لے لیا ہے۔

وزیراعظم نریندر مودی کی ہندو قوم پرست بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے دو ارکان کے اسلام مخالف تبصروں کے خلاف حالیہ ہفتوں میں مسلمان بھارت بھر میں سڑکوں پر نکل آئے ہیں۔

مسلمانوں اور ہندوؤں کے درمیان جھڑپیں ہوئیں اور بعض صورتوں میں کئی علاقوں میں مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپیں ہوئیں۔ اتر پردیش میں پولیس نے بدامنی کے سلسلے میں 300 سے زیادہ لوگوں کو گرفتار کیا ہے۔

بھارت کی اقلیتی مسلم کمیونٹی کے کچھ لوگ ان تبصروں کو بی جے پی کے دور حکومت میں عبادت کی آزادی سے لے کر حجاب سر پر اسکارف پہننے تک کے مسائل پر دباؤ اور تذلیل کی تازہ ترین مثال کے طور پر دیکھتے ہیں۔

بی جے پی نے اپنی ترجمان نوپور شرما کو معطل کر دیا ہے اور ایک اور رہنما نوین کمار جندال کو ان تبصروں کے لیے ملک سے نکال دیا ہے، جس کی وجہ سے کئی مسلم ممالک کے ساتھ سفارتی تنازع بھی پیدا ہو گیا ہے۔

پولیس نے دونوں کے خلاف مقدمات درج کیے ہیں اور حکومت نے کہا ہے کہ تبصرے اس کے خیالات کی عکاسی نہیں کرتے ہیں۔