Friday, October 7, 2022

فیصل ووڈا کی نااہلی سے متعلق اسلام آباد ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دینے کی استدعا مسترد

فیصل ووڈا کی نااہلی سے متعلق اسلام آباد ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دینے کی استدعا مسترد
March 1, 2022 ویب ڈیسک

اسلام آباد (92 نیوز) - فیصل ووڈا کی نااہلی سے متعلق اسلام آباد ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دینے اور سینیٹ کی خالی نشست پر انتخابات روکنے کی استدعا مسترد کر دی گئی۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے فیصل واوڈا نااہلی کیخلاف اپیل پر سماعت کی۔ دوران سماعت فیصل واوڈا کے وکیل نے خالی نشست پر سینیٹ الیکشن روک اور تاحیات نااہلی کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا کی۔

چیف جسٹس نے کہا کہ الیکشن کمیشن کے پاس تاحیات نااہلی کا اختیار غور طلب معاملہ ہے۔ جعلی بیان حلفی دیا گیا ہے۔ فوری فیصلہ معطل نہیں کر سکتے۔ اس کیس میں فیصل واوڈا کا کنڈکٹ بھی دیکھنا ہو گا۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے فیصل واوڈا کے وکیل کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ بار بار ایسا نہ کہیں کہ فیصلہ سیاسی سزائے موت ہے۔ آپ یہ کہنا چاہ رہے ہیں کہ الیکشن کمیشن کو آرٹیکل 62-1 ایف کے تحت تاحیات نااہلی کا فیصلہ نہیں دے سکتا۔ کیا الیکشن کمیشن نے اس سے پہلے کسی کو آرٹیکل 26 ٹو ون ایف کے تحت تاحیات نااہل کیا ہے۔ الیکشن کمیشن کے حکم پر کیا اپیل داخل ہو سکتی ہے؟

عدالت نے فیصل واوڈا کی خالی نشست پر سینیٹ الیکشن روکنے کی  درخواست مسترد کرتے ہوئے الیکشن کمیشن اور اٹارنی جنرل کو نوٹس جاری کر دیئے۔