Sunday, October 2, 2022

چینی صدر نے وزیراعظم شہباز شریف کو "عملیت پسندی اور کارکردگی کی حامل شخصیت" قرار دیا

چینی صدر نے وزیراعظم شہباز شریف کو "عملیت پسندی اور کارکردگی کی حامل شخصیت" قرار دیا
September 16, 2022 ویب ڈیسک

سمرقند (92 نیوز) - وزیراعظم شہباز شریف کی چینی صدر صدر شی جن پنگ سے ملاقات ہوئی، چینی صدر نے وزیر اعظم محمد شہباز شریف کو ‘عملیت پسندی اور کارکردگی کا حامل شخصیت’ قرار دیا۔

جمعہ کے روز سمرقند میں شنگھائی تعاون تنظیم کے سربراہان مملکت کے سربراہی اجلاس کے موقع پر وزیراعظم شہباز شریف اور چینی صدر شی جن پنگ کے درمیان دو طرفہ ملاقات ہوئی۔

دونوں رہنماؤں نے نئے دور میں مشترکہ مستقبل کے لیے پاک چین کمیونٹی بنانے پر اتفاق کیا۔ انہوں نے دوطرفہ تعلقات کے تمام پہلوؤں کا جائزہ لیا اور باہمی دلچسپی کے اہم علاقائی اور بین الاقوامی اُمور پر تبادلہ خیال کیا۔

وزیراعظم شہباز شریف کی چینی صدر کے ساتھ عہدہ سنبھالنے کے بعد پہلی ملاقات ہوئی اور یہ روایتی گرمجوشی اور غیر معمولی باہمی اعتماد اور افہام و تفہیم سے عبارت تھی۔

چینی صدر نے اپنے خیرمقدمی کلمات میں وزیر اعظم شہباز شریف کو 'عملیت پسندی اور استعداد کار اور چین پاکستان دوستی کے لیے دیرینہ عزم رکھنے والے رہنما ' قرار دیا۔

شہباز شریف نے اس بات پر زور دیا کہ آل ویدر سٹریٹجک کوآپریٹو پارٹنرشپ اور دونوں ممالک کے درمیان آہنی بھائی چارے نے ہمیشہ وقت کی آزمائش کا مقابلہ کیا ہے۔ انہوں نے صدر شی جن پنگ کو پائیدار ترقی، صنعتی ترقی، زرعی جدیدیت اور علاقائی روابط کے لیے پاکستان کی پالیسیوں سے آگاہ کیا۔

پاکستان کی سماجی و اقتصادی ترقی پر سی پیک کے اثرات کو سراہتے ہوئے، وزیراعظم نے سی پیک منصوبوں کی اعلیٰ معیار کی ترقی کے لیے اپنی حکومت کے عزم کا اعادہ کیا۔

انہوں نے پائیدار ترقی اور جیت کے نتائج کے لیے چینی صدر کے وژنری بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو اور گلوبل ڈویلپمنٹ انیشیٹو کی تعریف کی۔

دونوں رہنماؤں نے ایم ایل ون ریلوے پراجیکٹ پر فریم ورک معاہدے پر دستخط کا خیرمقدم کیا۔

وزیراعظم نے پاکستان میں سیلاب سے متاثرہ افراد کی فراخدلانہ اور بروقت مدد پر چین کی حکومت اور عوام کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ چین بھر کے تمام حلقوں کی طرف سے ہمدردی اور حمایت دل کو چھو رہی ہے اور ہماری منفرد دوستی کی حقیقی عکاسی ہے۔

اُنہوں نے پاکستان کی خودمختاری اور علاقائی سالمیت، ایف اے ٹی ایف فورم، کوویڈ، وبائی امراض اور دیگر شعبوں میں تعاون پر چینی حکومت کا شکریہ بھی ادا کیا۔

بین الاقوامی مسائل پر اظہار خیال کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ماحولیاتی تبدیلی، صحت کی وبائی امراض اور بڑھتی ہوئی عدم مساوات جیسے چیلنجوں سے باہمی تعاون کے ذریعے ہی نمٹا جا سکتا ہے۔

بھارت کے غیر قانونی طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین صورتحال کو اجاگر کرتے ہوئے شہباز شریف نے جموں و کشمیر کے تنازع پر اصولی موقف پر چین کا شکریہ ادا کیا۔

وزیراعظم نے تائیوان، تبت، سنکیانگ اور ہانگ کانگ سمیت اس کے بنیادی مفاد کے تمام مسائل پر چین کی پاکستان کی مستقل اور غیر متزلزل حمایت کا اعادہ کیا۔

دونوں رہنماؤں نے ایک دوسرے کو اپنے اپنے ممالک کے دورے کی دعوت دی۔