Friday, September 30, 2022

آج ہر سوُ پھیلا، اجُالا ہے ’نور‘ کا!

آج ہر سوُ پھیلا، اجُالا ہے ’نور‘ کا!
February 28, 2022 ویب ڈیسک

 سمجھوں   گا   کہ   حاصل   ہوا،

 مقصد ِ  حیات،،

  گر  جاں   جدا   ہو،

 جسم   سے،

  ’مدینے‘    میں،

    اور   روح   کرے   طواف،

 ’کعبے‘   کا،

               

  اے   کاش۔۔۔۔“

  حشر   میں   ملے،

    یوں   میری   محنتوں   کا   صلہ،

ہو  جائے  آپ  ﷺ  کی  نگاہِ  کرم،

اور  لبوں  پر  ہو  میرے،

’ صَلِ عَلیٰ،،   صَلِ عَلیٰ 

 

  کیوں   ڈر   ہو   مجھے   لحد   میں،

 تنگیِ   زمیں   کا،

  میں   تو   امتی   ہوں،

  رحمت للعالمین  ﷺ   کا،

 

 گر   کٹے   عمر   ساری،

  اطاعت ِ  رسول  ﷺ   میں،

 کیا   بھلا   ہو   پریشانی،

  پھر   جنت   کے   حصول   میں!

    ٭٭٭

کاشف شمیم صدیقی