Saturday, October 16, 2021
English News آج کا اخبار براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی
English News آج کا اخبار
براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی

رمیز راجہ 36 ویں چیئرمین پاکستان کرکٹ بورڈ منتخب

رمیز راجہ 36 ویں چیئرمین پاکستان کرکٹ بورڈ منتخب
September 13, 2021 --- ویب ڈیسک

لاہور (92 نیوز) سابق کپتان قومی ٹیم رمیز راجہ چیئرمین پاکستان کرکٹ بورڈ منتخب ہو گئے۔ 

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور 1992 ورلڈ کپ کے فاتح رمیز راجہ کو پی سی بی الیکشن کمشنر جسٹس (ر) شیخ عظمت سعید کی زیرصدارت خصوصی اجلاس میں 3 سالہ مدت کے لیے پاکستان کرکٹ بورڈ کا 36 واں چیئرمین متفقہ اور بلا مقابلہ منتخب کیا گیا۔

رمیز راجہ بھی پی سی بی بورڈ آف گورننگ اجلاس میں موجود تھے۔ وسیم خان، اسد علی خان، عاصم واجد جواد، عالیہ ظفر، عارف سعید اور جاوید قریشی (گورننگ بورڈ ممبران) بھی شریک ہوئے۔

رمیز راجہ کو پاکستان کے 18 ویں ٹیسٹ اور 12 ویں ون ڈے کپتان ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ انہوں نے 1984 سے 1997 کے عرصے میں 255 بین الاقوامی میچ کھیلے جس میں انہوں نے 8,674 رنز بنائے۔

سابق کپتان قومی کرکٹ ٹیم رمیز راجہ نے 57 ٹیسٹ میچوں کی 94 اننگز میں 31.8 کی ایوریج سے 2833 رنز بنائے جبکہ ون ڈے کیرئیر میں 198 میچوں میں 197 اننگز کھیل کر 32.1 کی ایوریج سے 5841 رنز سکور کیے، ان کا سب سے زیادہ انفرادی سکور 119 رنز ناقابل شکست رہا۔

وہ اس سے قبل 2003-2004 تک پی سی بی کے چیف ایگزیکٹو کے طور پر خدمات انجام دے چکے ہیں۔ آئی سی سی چیف ایگزیکٹوز کمیٹی اور فی الحال ایم سی سی ورلڈ کرکٹ کمیٹی میں شامل ہیں۔ وہ دنیا کے معروف کرکٹ نیٹ ورکس کے ساتھ ایک کامیاب براڈ کاسٹر رہے ہیں اور انہیں پاکستان کرکٹ کی آواز کے طور پر بڑے پیمانے پر سمجھا جاتا ہے۔

رمیز راجہ عبدالحفیظ کاردار (1972-1977)، جاوید برکی (1994-1995) اور اعجاز بٹ (2008-2011) کے بعد پی سی بی کی سربراہی کرنے والے پاکستان کے چوتھے سابق بین الاقوامی کرکٹر ہیں۔

اپنے انتخاب کے بعد پی سی بی بورڈ آف گورننگ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے، رمیز راجہ نے کہا "میں آپ سب کا شکر گزار ہوں کہ مجھے پی سی بی کا چیئرمین منتخب کیا اور آپ کے ساتھ مل کر کام کرنے کا منتظر ہوں تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ پاکستان کرکٹ آگے بڑھے اور مضبوط ہوتی رہے۔

اُنہوں نے کہا کہ میری ایک اہم توجہ پاکستان کی مردوں کی کرکٹ ٹیم میں وہی ثقافت، ذہن سازی، رویہ اور اپروچ متعارف کرانے میں مدد کرنا ہے جس نے پاکستان کو کرکٹ کھیلنے والی سب سے زیادہ خوفزدہ قوموں میں سے ایک بنا دیا تھا۔ ایک تنظیم کے طور پر، ہم سب کو قومی ٹیم کے پیچھے ہونے کی ضرورت ہے اور انہیں مطلوبہ مدد اور تعاون فراہم کرنے کی ضرورت ہے تاکہ وہ کرکٹ کا وہ برانڈ تیار کر سکیں، جس کی شائقین ان سے ہر بار توقع کرتے ہیں جب وہ کھیل کے میدان میں قدم رکھتے ہیں۔

اُن کا کہنا تھا کہ واضح طور پر، ایک سابق کرکٹر کی حیثیت سے، میری دوسری ترجیح اپنے ماضی اور موجودہ کرکٹرز کی فلاح و بہبود کو دیکھنا ہوگی۔ یہ کھیل ہمیشہ کرکٹرز کے بارے میں ہوتا ہے اور رہے گا اور اس طرح وہ اپنے والدین سے زیادہ پہچان اور احترام کے مستحق ہیں۔

تازہ ترین خبریں حاصل کرنے کے لیے فوری اطلاع کی اجازت دیں

آپ کسی بھی وقت دائیں طرف نیچے بیل آئیکن پر صرف ایک کلک کے ذریعے آسانی سے سبسکرائب کر سکتے ہیں۔