Friday, December 2, 2022

گھوٹکی کی نومسلم بہنوں سے متعلق انکوائری کمیشن کی رپورٹ آگئی ‏

گھوٹکی کی نومسلم بہنوں سے متعلق انکوائری کمیشن کی رپورٹ آگئی ‏

اسلام آباد ( 92 نیوز) گھوٹکی کی نو مسلم بہنوں سے متعلق انکوائری کمیشن رپورٹ سامنے آگئی، پانچ رکنی عدالتی کمیشن کی انکوائری رپورٹ میں اہم انکشافات ہوئے ہیں۔

گھوٹکی کی ہندو مذہب چھوڑنے والی 2 نومسلم بہنوں سے متعلق اسلام آباد ہائی کورٹ کے حکم پر قائم پانچ رکنی عدالتی کمیشن کی انکوائری رپورٹ میں اہم انکشافات سامنے آگئے ۔

رپورٹ کے مطابق لڑکیوں کے گھوٹکی کی نو مسلم بہنوں کے والد ہری لال نے بیٹیوں کے گھر چھوڑنے کے دو دن بعد فارم ب  کی درخواست میں لڑکیوں کی تاریخ پیدائش تبدیل کرنے کی کوشش کی۔

رپورٹ میں انکشاف کیا گیا کہ گھوٹکی کے ہری لال کے 10 بچے ہیں لیکن نادرا کے پاس صرف 3 رجسٹرڈ ہیں، نو مسلم لڑکیوں کے شوہر بھی شادی شدہ نکلے۔

رپورٹ کے مطابق نادیہ اور آسیہ کے والد نے لڑکیوں کے گھر چھوڑنے کے دو دن بعد 22 مارچ کو فارم ب کی درخواست دی ،نو مسلم لڑکیوں کے والد ہرل لال نے بیٹوں کی تاریخ پیدائش میں ردبدول کرنے کی کوشش کی ۔

ہری لال نے  درخواست کی کہ ان کی تاریخ پیدائش کو 2006 کردیا جائے جبکہ اسکول ریکارڈ کے مطابق نادیہ کی تاریخ پیدائش 2002 اور آسیہ کی تاریخ پیدائش 2003 ہے اور 2008 میں یہ دونوں بہنیں کلاس ون میں تھیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ ہری لال کے 10 بچے ہیں لیکن نادرا کے پاس صرف 3 رجسٹرڈ ہیں،جبکہ لڑکیوں کے شوہر بھی پہلے سے شادی شدہ نکلے، برکت علی کے پہلی بیوی سے تین جبکہ صفدر علی کے چار بچے ہیں۔