Friday, January 21, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

کیلبری فونٹ 2005 سے قبل کمرشل بنیادوں پر دستیاب نہیں تھا، گواہ

کیلبری فونٹ 2005 سے قبل کمرشل بنیادوں پر دستیاب نہیں تھا، گواہ
February 23, 2018

لندن (92 نیوز) شریف خاندان کیخلاف العزیزیہ ، ایون فیلڈ ضمنی ریفرنسز کی سماعت ہوئی ۔
  ایون فیلڈپراپرٹیز ریفرنس میں استغاثہ کےگواہ رابرٹ ریڈلے ویڈیو لنک کے ذریعے گواہی دینے پاکستان ہائی کمیشن لندن پہنچےاور اپنا بیان قلمبند کرایا ۔
کیلبری فونٹ کے حوالے سے رابرٹ ریڈلے نے واضح کیا کہ دو ہزار پانچ میں اس فونٹ کا بیٹا ورژن خالصتاً جانچ پڑتال کیلئےمتعارف کرایا گیا اور اس کا لائسنس صرف آئی ٹی ماہرین کو دیا گیا تاکہ اس کے نقائص دور کئےجا سکیں اور استعمال کیلئے مزید بہتر بنایا جا سکے ۔
رابرٹ ریڈلے نے بتایا کہ یہ بات درست نہیں کہ اس وقت اس فونٹ کو ہزاروں لوگ استعمال کر رہے تھے ۔
رابرٹ ریڈلے کے مطابق کیلبری فونٹ اکتیس جنوری دو ہزار سات کو کمرشل بنیادوں پر متعارف کرایا گیا اور اس سے پہلےاس کی مدد سے کسی بھی قسم کی دستاویز لکھنا ممکن نہیں تھا ۔
اس وضاحت کے ساتھ انہوں نے اپنے ریسرچ نوٹس کا بھی حوالہ دیا جو انہوں نے اپنےساتھ رکھے ہوئے تھے ۔
نوٹس پڑھنے پر شریف خاندان کے وکیل خواجہ حارث نے اعتراض اٹھایا تو ریڈلے نے کہا وہ نہ صرف برطانوی قوانین کے تحت نوٹس پڑھنے کا حق رکھتے ہیں بلکہ اپنی اس ریسرچ پر پراسیکیوشن ٹیم سے پہلے بھی تبادلہ خیال کر چکے ہیں جس پر خواجہ حارث نے جرح کیلئے ان نوٹس کی کاپی طلب کر لی ۔