Thursday, January 20, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

ڈالر کی قدر میں مصنوعی اضافہ کیا گیا،اسٹیٹ بینک کے ڈپٹی گورنر کو بھی اس کا پتہ نہیں تھا: اسحاق ڈار

ڈالر کی قدر میں مصنوعی اضافہ کیا گیا،اسٹیٹ بینک کے ڈپٹی گورنر کو بھی اس کا پتہ نہیں تھا: اسحاق ڈار
July 6, 2017

اسلام آباد(92نیوز)حکومت نے ڈالر کی قیمت میں اچانک اضافے کی تحقیقات  کا اعلان کردیا، وزیرخزانہ اسحاق ڈار کہتے ہیں  ڈالر کی قدر میں مصنوعی اضافہ کیا گیا،اسٹیٹ بینک کے ڈپٹی گورنر کو بھی اس کا پتہ نہیں تھا۔

تفصیلات کےمطابق  بدھ کے روز ایک طرف وزیراعظم کی بیٹی مریم نواز کی جے آئی ٹی میں پیشی تو دوسری طرف ملک میں ڈالر کی قدر نے اُڑان بھرلی روپے کی قدر تیزی سے نیچے چلی گئی۔ چند گھنٹوں کے دوران ڈالر کی قیمت میں تقریباًساڑھے تین روپے کا اضافہ ہوگیا ۔ وزیرخزانہ اسحاق ڈار نےاس صورتحال کا جائزہ لینے کیلئے بینکوں کے سربراہوں کا ہنگامی اجلاس طلب کیا۔ اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتےہوئے اسحاق ڈار نے کہا کہ ڈالر کی قیمت میں  اچانک اضافہ حیران کن تھا۔ ابتدائی تحقیقات میں پتہ چلا ہے کہ کچھ افراد اور اداروں کے درمیان رابطے کے فقدان اور غلط فہمی کی بنیاد پر ڈالر مہنگا ہوا۔

انہوں نے کہا کہ ڈالر کی قدر میں مصنوعی اضافہ کیا گیا، مجھے پہلے اسکی سمجھ نہیں آئی، میں سمجھا شاید سیاسی حالات کی وجہ سے یہ صورتحال پیدا ہوئی ہے ۔ وزیرخزانہ کا کہنا تھا کہ بینکوں کے صدور نے انہیں بتایا کہ ان کو انفرادی طور پر ہدایات دی گئی تھیں۔ یہ میری ذات کا نہیں پاکستان کا مسئلہ ہے،اس کی آزادانہ تحقیقات کرائی جائیں گی اور  ذمہ داروں کو قوم کے سامنے لائیں گے۔

وزیرخزانہ نے کہا کہ فیصلہ ایک ڈپٹی گورنر نے کیا اور اس کے ساتھی ڈپٹی گورنر اسٹیٹ بینک کو بھی اس کا پتہ نہیں تھا کرنٹ اکاؤنٹ  کے خسارے کو بنیاد بنا کر معیشت کو دھچکا نہیں پہنچایا جاسکتا۔

وزیرخزانہ کا کہنا تھا کہ اس وقت قائم مقام گورنر کام کر رہے ہیں جس کی اجازت تین ماہ تک ہوتی ہے ،وزیراعظم کی واپسی پر اسٹیٹ بنک کے مستقل گورنر کی تعیناتی کر دی جائے گی۔

اسحاق ڈار نے بتایا کہ اس وقت بینکوں کے پاس 5 ارب اوراسٹیٹ بینک کے پاس 16 ارب ڈالر کے ذخائر موجود ہیں اور ملکی معیشت مستحکم ہے۔