Monday, October 3, 2022

پی ڈی ایم کے جلسے میں آئین سے ماورا تقاریر کی گئیں، لیاقت شاہوانی

پی ڈی ایم کے جلسے میں آئین سے ماورا تقاریر کی گئیں، لیاقت شاہوانی
کوئٹہ (92 نیوز) ترجمان بلوچستان حکومت لیاقت شاہوانی کہتے ہیں کہ پی ڈی ایم کے جلسے میں آئین سے ماورا تقاریر کی گئیں۔ وزیراعلیٰ کے منصب کو گالی دی گئی۔ ترجمان بلوچستان حکومت لیاقت شاہوانی نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ مریم نواز کی تقریر لعنت سے شروع اور لعنت پر ختم ہوئی۔ مولانا فضل الرحمٰن ڈیرہ اسماعیل خان میں ہارے۔ غصہ بلوچستان میں آکر نکالا۔ لیاقت شاہوانی نے کہا کہ ہزار گنجی دھماکے میں ملوث عناصر کو کیفرکردار تک پہنچائیں گے۔ عوام کے جان و مال کا تحفظ حکومت کی ذمہ داری ہے۔ بلوچستان کی پسماندگی کے ذمہ دار پی ڈی ایم کی اسٹیج پر بیٹھے تھے۔ انہوں نے کہا کہ کوئٹہ میں پی ڈی ایم جلسے  میں صوبائی حکومت نے اپنی ذمہ داریاں پوری کیں، پی ڈی ایم کی جانب جس آئین کی بات کی جاتی ہے، کل اسی کی پرخچے اڑائے گئے۔ جام کمال جب آپ کے وفاقی وزیر تھے تو آپ کے لیے محترم تھے، جب انہوں نے ن لیگ چھوڑ دی تو ان کیخلاف منفی پراپیگنڈا کیا جارہا ہے۔ اُن کا کہنا تھا کہ 2018 میں عوام کی جانب سے مسترد کیے گئے عناصر اب احتجاجی سیاست کررہے ہیں، قانون نافذ کرنے والے اداروں کی کاوشیں قابل تعریف ہیں۔ وزیراعلیٰ عہدہ آئینی ہے، اس عہدے کو کل گالی دی گئی۔ ترجمان لیاقت شاہوانی بولے کہ آپ پاناما اور اقامہ کیس میں نااہل ہوئے، پیپلزپارٹی بھی سوائے 18 ویں ترمیم کے علاوہ کوئی مثال نہ دے سکی۔ پی ڈی ایم کے 90 فیصد قائدین سی پیک پر ن لیگ کیخلاف تھے۔ ایک دوسرے کے خلاف بولنے والے آج متحد ہوئے ہیں۔ ن لیگ یا پیپلزپارٹی نے ایک منصوبہ نہیں لگایا۔ انہوں نے مزید کہا کہ مینگل گروپ نے سی پیک پر ن لیگ کیخلاف بیٹھک بلائی تھی، بلوچستان کے عوام سے گزارش ہے ترقی کے سلسلہ آپ کے مستقبل کیلئے ہے۔