Friday, October 7, 2022

پی آئی اے کے 10 سالہ خصوصی آڈٹ کا حکم نامہ جاری

پی آئی اے کے 10 سالہ خصوصی آڈٹ کا حکم نامہ جاری
اسلام آباد (92 نیوز) سپریم کورٹ نے پی آئی اے کے 10 سالہ خصوصی آڈٹ کا حکم دے دیا۔ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے پی آئی اے کے طیاروں پر قومی پرچم کی بجائے مارخور کی تصویر لگانے سے متعلق کیس کی سماعت کی۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ پسند ، ناپسند کے باعث سے ادارے کو نقصان پہنچا۔ جو لوگ اس کے ذمہ دار ہیں انہوں نے ہاؤسنگ سوسائٹیاں اور فارم ہائوسز بنا رکھے ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا کیس میں مداخلت کا مقصد پی آئی اے کے خسارے کی وجوہات جاننا ہے۔ پی آئی اے کی انتظامیہ مضبوط ہاتھوں میں ہونی چاہیے۔  چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ مارخور کی تصویر کے بجائے باتھ رومز کو بہتر کریں۔ عدالت نے آڈیٹر جنرل کو پی آئی اے کے گزشتہ 10 سال کے خصوصی آڈٹ کا حکم دیتے ہوئے فیصلہ ہونے تک بھرتیوں اور برخاستگی پر پابندی لگا دی۔ عدالت نے سابق مشیر ہوا بازی شجاعت عظیم اور سابق ایم ڈی اسلم آغا کو بیرون ملک جانے کی اجازت دیتے ہوئےسماعت ہفتے تک ملتوی کر دی۔ قبل ازیں چیف جسٹس نے قومی ایئر لائن کیلئے سٹیکر تبدیل کرنے کا نوٹس لیتے ہوئے پی آئی اے کو جہازوں سے قومی پرچم ہٹانے سے روک دیا۔ چیف جسٹس میاں محمد ثاقب نثار نے ریماکس دیئے کہ جھنڈے کی جگہ ایک جانور کی تصویر لگائی جا رہی ہے، ایم ڈی پی آئی نے عدالت کو بتایا کہ مارخور قومی جانور ہے اس کی تصویر پینٹ کی جارہی ہے۔ چیف جسٹس نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی جانب سے پی آئی اے کی بہتری کے لئے 20 ارب کا بل آوٹ پیکج دیا گیا تھا نہ کہ جہازوں کو پینٹ کرنے کے لئے۔ کیا پی آئی اے منافع میں ہے جو ایسے کام کر رہی ہے۔ چیف جسٹس نے ایم ڈی پی آئی اے  سے استفسار کرتے ہوئے کہا کیا ایک جانورجھنڈے کی جگہ لے گا ، اس کے پینٹ ہونے پر کتنی لاگت آئے گی،انکا جواب تھا کہ ایک جہاز پر لاگت 27 لاکھ آئے گی، اور ہر جہاز کو 4 سال بعد دوباہ پینٹ کرنا ہوتا ہے۔ چیف جسٹس نے مزید کہا کہ لاگت 27 لاکھ نہیں 34 لاکھ ہے۔