Monday, January 17, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

پی آئی اے ملازمین کے قتل پر سانحہ ماڈل ٹاﺅن کی طرح پردہ نہیں ڈالنے دینگے: زرداری

پی آئی اے ملازمین کے قتل پر سانحہ ماڈل ٹاﺅن کی طرح پردہ نہیں ڈالنے دینگے: زرداری
February 3, 2016
کراچی (92نیوز) سابق صدر پاکستان اور پاکستان پیپلزپارٹی پارلیمنٹیرینز کے صدر آصف علی زرداری نے پی آئی اے کے ملازمین کے ظالمانہ قتل کی انتہائی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ وہ لوگ جو اس قتل کے ذمہ دار ہیں فوری طور پر ان کے چہروں سے نقاب اتارا جائے اور انہیں قانون کے مطابق سخت ترین سزائیں دی جائیں۔ آصف زرداری کا کہنا تھا کہ پی آئی اے کے ان ملازمین کے خلاف طاقت کا استعمال مجرمانہ ہے جو اپنے قانونی حق کے لئے احتجاج کر رہے تھے کیونکہ ان کا روزگار خطرے میں ہے۔ پی آئی اے کے ملازمین کے قتل کا سن کر انتہائی صدمہ پہنچا ہے اور قتل کے ذمے داروں کو ہر صورت میں سزا دی جانی چاہیے۔ سابق صدر کے ترجمان سینیٹر فرحت اللہ بابر نے کہا کہ سابق صدر نے یہ بات بھی کہی کہ عوام کسی صورت میں ماڈل ٹاو¿ن لاہور کے واقعے کی طرح اس واقعے پر پردہ ڈالنے کی کسی بھی کوشش کی اجازت نہیں دیں گے اور پیپلزپارٹی بھی اس قتل پر پردہ ڈالنے کی کبھی اجازت نہیں دے گی۔ اس واقعے نے حکومت کی صورتحال سے طاقت کے ذریعے نمٹنے کی کوشش کو بے نقاب کر دیا ہے اور حکومت پی آئی اے کا معاملہ حل کرنے میں ناکام ہو چکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی وزراءکا نجکاری کے متعلق دوغلا پن اس بات سے بھی ثابت ہوگیا ہے کہ لازمی سروس ایکٹ نافذ کرکے وہ کارکنوں کو دبانا چاہتے ہیں اور اس کے علاوہ ایوی ایشن کے مشیر سپریم کورٹ کی ہدایت کے باوجود اب تک کام کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ دعویٰ بھی قطعی جھوٹا ہے کہ حکومت پی آئی اے کو ایک نقصان دہ ادارے سے منافع بخش ادارے میں تبدیل کرنے کے لئے اس کی نجکاری کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت ایئرپورٹ پر فائرنگ کرنا جبکہ متعدد طیارے فضا میں سینکڑوں مسافروں کو لے کر چکر لگا رہے تھے، انتہائی بیوقوفانہ اور خطرناک عمل تھا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت یہ اقدام قابل معافی نہیں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ پی آئی اے تقریباً تین ارب خسارے میں جا رہی ہے اور اس میں اصلاحات کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کی جانب سے 500 ارب روپے سرکلر کی مد میں ادا کرنا بھی قومی معیشت کے لئے خطرہ ہے۔ اس حکومت کو عالمی منڈیوں میں تیل کی قیمتیں کم ہونے سے سات ارب ڈالر کا فائدہ پہنچا ہے لیکن حکومت کی نالائقی ہے کہ وہ اس سے کوئی فائدہ نہیں اٹھا سکی۔