Friday, January 28, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

نااہلی کیس  : عدالت اطمینان کرنا چاہتی ہے کہ لندن فلیٹ کا پیسہ پاکستان سے نہیں گیا،چیف جسٹس

نااہلی کیس  : عدالت اطمینان کرنا چاہتی ہے کہ لندن فلیٹ کا پیسہ پاکستان سے نہیں گیا،چیف جسٹس
July 13, 2017

اسلام آباد(92نیوز)سپریم کورٹ میں عمران خان کی  نااہلی اور تحریک انصاف کو غیرقانونی فنڈنگ کیس کی سماعت۔ چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ آف شور کمپنیاں عموما پیسہ چھپانے اور منی لانڈرنگ کے لیے استعمال ہوتی ہیں۔ عدالت اطمینان کرنا چاہتی ہے کہ لندن فلیٹ کا پیسہ پاکستان سے نہیں گیا۔

تفصیلات کےمطابق سپریم کورٹ میں عمران خان نااہلی اور تحریک انصاف کی غیر قانونی فنڈنگ کیس کی سماعت چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بنچ  نے کی۔عمران خان کے وکیل نعیم بخاری نے عدالت کو بتایا کہ ایڈووکیٹ انور منصور بیرون ملک علیل ہیں، وہ ایک ہسپتال میں زیرعلاج ہیں۔ چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ سپریم کورٹ مقدمے کو بوجھ نہیں سمجھتی۔ چاہتے ہیں کہ اس مقدمہ سے فارغ ہوکر عام لوگوں کے کیس سنیں۔ ان مقدمات کو جلد از جلد نمٹانا چاہتے ہیں۔ جسٹس فیصل عرب نے اکرم شیخ کرمخاطب کرتے ہوئے کہا کہ کبھی آپ کہتے ہیں فلیٹ عمران خان کا ہے جو ظاہر نہیں کیا ۔ کبھی کہتے ہیں فلیٹ آف شور کمپنی کا ہے۔ آپ کے موقف میں تضاد ہے۔اکرم شیخ نے کہا کہ ایمنسٹی اسکیم سے فائدہ عمران خان نے اٹھایا۔نیازی سروسز نے نہیں۔ نعیم بخاری نے کہا کہ کیا ٹیکس ایمنسٹی اسکیم سے فائدہ اٹھانا بے ایمانی ہے؟؟ تو فائدہ اٹھانے والے سب بے ایمان ہیں۔ چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس میں کہا کہ آف شور کمپنیاں عموماً پیسہ چھپانے اور منی لانڈرنگ کے لیے استعمال ہوتی ہیں۔ عدالت اطمینان کرنا چاہتی ہے کہ لندن فلیٹ کا پیسہ پاکستان سے نہیں گیا۔آپ عمران خان کو صادق امین نا ہونے پر نا اہل کروانا چاہتےہیں۔ایسی چیزوں پر ہم کسی کو نا اہل قرار نہیں دے سکتے۔