Monday, December 6, 2021
English News آج کا اخبار براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی
English News آج کا اخبار
براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی

میٹرو ٹرین کے راستےپر آنیوالے11 تاریخی مقامات پر ہر قسم کی تعمیر روک دی گئی

میٹرو ٹرین کے راستےپر آنیوالے11 تاریخی مقامات پر ہر قسم کی تعمیر روک دی گئی
August 19, 2016
لاہور(92نیوز)لاہور ہائیکورٹ نے اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبے کے راستے میں آنے والے گیارہ تاریخی مقامات پر ہر قسم کی تعمیر روک دی  پنجاب حکومت عدالتی فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ  میں اپیل کریگی ۔ تفصیلات کےمطابق لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس عابد عزیز شیخ اور جسٹس شاہد کریم پر مشتمل دو رکنی بنچ نے اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبے کے خلاف ایک ہی نوعیت کی مختلف درخواستوں پر فیصلہ سنا دیا عدالت نے گزشتہ ماہ درخواستوں پر کارروائی مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ کیا تھا۔ لاہور ہائیکورٹ نے اپنے فیصلے میں منصوبے کے لیے تاریخی عمارتوں کے حوالے سے جاری تمام این او سیز کو کالعدم قرار دے دیا ۔ لاہور ہائیکورٹ نے محکمہ آثار قدیمہ کے ڈی جی کو حکم دیا کہ وہ ایک کمیٹی تشکیل دیں جس میں عالمی سطح کے ماہرین شامل ہوں اور وہ یونیسیف کی سفارشات کو مدنظر رکھتے ہوئے تاریخی مقامات کے حوالے سے رپورٹ تیار کریں۔ لاہور ہائیکورٹ نے اٹھائیس جنوری کو تاریخی عمارتوں کے بارے میں جو حکم امتناعی جاری کیا تھا اس کی بھی توثیق کر دی ہے عدالت نے جن گیارہ تاریخی مقامات پر کام روکا ہے ان میں مقبرہ زیب النساء، چوبرجی، دربار باباموج دریا، ایوان اوقاف، جی پی او، لکشمی مینشن اور شالامارباغ سمیت دیگر عمارتیں شامل ہیں۔ لاہور ہائیکورٹ نے ماحولیاتی آلودگی کو بنیاد بنا کر اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبے کو کالعدم قرار دینے کے بارے میں درخواستیں مسترد کر دیں۔