Sunday, November 27, 2022

ممتاز گلوکار پرویز مہدی کو مداحوں سے بچھڑے گیارہ برس بیت گئے

ممتاز گلوکار پرویز مہدی کو مداحوں سے بچھڑے گیارہ برس بیت گئے
لاہور (92نیوز) ملکہ ترنم نور جہاں کے ساتھ ”گوریئے میں جاناں پردیس“ گا کر اپنے فنی کیرئیر کا آغاز کرنے والے ممتاز گلوکار پرویز مہدی کو اپنے مداحوں سے بچھڑے گیارہ برس بیت چکے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق پرویز مہدی کا تعلق موسیقی کے کلاسیکل گھرانے سے تھا۔ ان کے والد بشیر حسین راہی اپنے دور کے معروف لوک فنکار تھے۔ پرویز مہدی نے شہنشاہ غزل مہدی حسن کی باقاعدہ شاگردی اختیار کی اور کئی سال استاد کی خدمت میں گزارے۔ 1980ءمیں گائیکی کا باقاعدہ آغاز کیا۔ تیس سالہ فنی سفر میں پرویز مہدی نے ریڈیو‘ ٹی وی اور فلم کیلئے سینکڑوں گیت اور غزلیں گا کر اپنے لاکھوں مداح بنائے۔ پرویز مہدی کے مدھر لہجے کو کئی بھارتی گلوکاروں نے کاپی کیا۔ دلیر مہدی انہیں اپنا استاد مانتے ہیں۔ پرویز کی گائیکی میں جدائی اور و چھوڑے کا رنگ بہت نمایاں تھا۔ پرویز مہدی انسان دوست اور خوبصورت گائیک تھے جنہوں نے بڑے بڑے گائیکوں کی موجودگی میں اپنے آپ کو خوب منوایا۔ فن سے محبت کرنیوالی یہ مدھر آواز انتیس اگست دو ہزار پانچ کو ہمیشہ ہمیشہ کیلئے خاموش ہو گئی مگر ان کے گائے ہوئے گیت آج بھی لوگوں کو گرویدہ کر لیتے ہیں۔