Wednesday, January 26, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

مشال قتل کیس، ایک ملزم کو سزائے موت ، 5 کو 25،25 سال قید سنا دی گئی

مشال قتل کیس، ایک ملزم کو سزائے موت ، 5 کو 25،25 سال قید سنا دی گئی
February 7, 2018

ہری پور ( 92 نیوز ) ایبٹ آباد کی انسداد دہشتگردی کی عدالت نے مردان کی عبدالولی خان یونی ورسٹی میں قتل کئے گئے مشال خان کے کیس کا فیصلہ سنا دیا ۔ عدالت نے مرکزی ملزم کو سزائے موت جب کہ 5 شریک ملزموں کو 25،25سال اور 25 ملزمون کو 4 ،4 قید کی سزا سنا دی ۔ عدالت نے مقدمے میں 26 افراد کو باعزت بری کر دیا ۔
ایبٹ آباد کی انسداد دہشتگردی عدالت نے مقدمے کا محفوظ فیصلہ سینٹرل جیل ہری پور میں سنایا ۔ مشال کے قتل کے الزام میں 57 افراد کو گرفتار کیا گیا تھا جبکہ 50 گواہان کے بیانات قلم بند کئے گئے تھے ۔ عدالت نے 27 جنوری 2018 کو کیس کا فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

مشال کے بھائی ایمل نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ  فیصلے پر وکلا سے  مشاورت  کرینگے ، پولیس کے اعلیٰ افسران کے ساتھ  بھی رابطے میں ہیں ۔ پولیس سے اپیل کرسکتے ہیں کہ جو ملزم ابھی گرفتار نہیں ہوئے ان کو گرفتار کیا جائے۔

ایمل نے مزید کہا کہ عمران  خان نے کہا تھا  یونیورسٹی آف صوابی کا نام مشال خان شہید رکھیں گے ۔ عمران خان اپنا وعدہ پورا کریں

مشال کی والدہ کا کہنا ہے کہ مشال تو واپس نہیں آسکتا، لیکن کسی اور ماں کے ساتھ نہیں ہونا چاہیے۔

صوابی سے تعلق رکھنے والے 23 سالہ مشال خان کو مردان کی عبدالولی خان یونیورسٹی میں مشتعل ہجوم نے 13 اپریل 2017 کو مبینہ طور پر گستاخانہ بیان پر تشدد کر کے قتل کردیا تھا جس کے بعد سوشل میڈیا پر تشدد کی متعدد ویڈیوز جاری ہوئیں۔
ویڈیوز جاری ہونے کے بعد پولیس حرکت میں آئی اور 57 افراد کو گرفتار کرلیا جن میں بیشتر کا تعلق عبدالولی خان یونیورسٹی سے ہے ۔ جن میں یونیورسٹی کے ملازمین بھی شامل ہیں۔
مشال خان شعبہ صحافت کاطالب علم تھا۔ مشال کے والد کے مطابق مشال خان نے قتل سے چند روز قبل ایک نجی ٹی وی چینل کو انٹرویو میں یونیورسٹی انتظامیہ کی پالیسیوں پر تنقید کی تھی۔