Monday, October 3, 2022

قلعہ عبداللہ میں دس سال کے بچے کو زیادتی کے بعد قتل کرنیوالے دو ملزم گرفتار

قلعہ عبداللہ میں دس سال کے بچے کو زیادتی کے بعد قتل کرنیوالے دو ملزم گرفتار

قلعہ عبداللہ ( 92 نیوز) قلعہ عبداللہ میں دس سال کے بچے کو زیادتی کے بعد قتل کرنےوالے دو ملزم گرفتار کر لئے گئے ، ملزموں نے اعتراف جرم بھی کرلیا۔

بلوچستان کے علاقے قلعہ عبداللہ میزئی اڈہ میں 6روز قبل 10سالہ معصوم بچے انعام اللہ داوی کو زیادتی کے بعد قتل اور لاش درخت سے لٹکا دی گئی تھی , جس کے بعد لیویز فورس نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ ملکر ملزمان کی تلاش شروع کردی .

اسسٹنٹ کمشنر جہانزیب شیخ کے مطابق لیویز نے میزئی اڈا میں کاrروائی کرتے ہوئے بچے کو زیادتی کے بعد قتل کرنے پر دو ملزمان کو گرفتار  کیا گیا ۔

ملزمان نے اعتراف جرم کر تے ہوئے بیان دیا ہے کہ بچے کو باغ سے سیب دینے پر لے گئے 20 روپے دیے ، نہ  ماننے پر زبردستی زیادتی کی ، ڈر تھا کہ بچے کو زندہ چھوڑنے پر سب کو بتا دے گا جس پر ساتھی کے ساتھ ملکر گلہ دبا کر قتل کیا۔قتل کو خودکشی قرار دینے کے لئے معصوم بچے کی لاش کو درخت کے ساتھ لٹکا دیا ۔

لیویز حکام کے مطابق ملزمان کا صحت جرم ماننے کے بعد ڈی این اے ٹیسٹ بھی کئے جائینگے۔

میزئی اڈا میں بچے سے جنسی زیادتی و بعد ازاں قتل سے متعلق چیف جسٹس بلوچستان ہائیکورٹ جسٹس جمال خان مندوخیل اورجسٹس عبدالحمید بلوچ پر مشتمل بنچ نے سماعت کی ۔

چیف جسٹس نے دوران سماعت ریمارکس دئےے کہ صوبہ بھر میں بچوں سے جنسی زیادتی کے واقعات میں اضافہ کا رجحان دیکھا جارہاہے،تمام کمشنرز اور ڈی آئی جیز اپنے متعلقہ علاقوں میں ان واقعات کے خاتمے کے لئے تمام تر ممکنہ اقدامات کریں۔

عدالت نے آئندہ سماعت پر صوبے کے تمام کمشنرز اور ڈی آئی جیز سے جنسی تشدد کی رپورٹس طلب کر لی۔ عدالت نے حکم دیا کہ تمام عدالتیں جنسی تشدد کے کیسز کو ترجیحی بنیادوں اور قانون کے مطابق جلد از جلد نمٹائیں ۔