Wednesday, January 26, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

فلائٹ آپریشن کی معطلی کا آج پانچواں روز‘ اربوں روپے کا نقصان‘ مسافر خوار

فلائٹ آپریشن کی معطلی کا آج پانچواں روز‘ اربوں روپے کا نقصان‘ مسافر خوار
February 6, 2016
لاہور (92نیوز) قومی ایئر لائن کے ملازموں کی ہڑتال جاری ہے اور فلائٹ آپریشن کی معطلی کا آج پانچواں دن ہے۔ اس سارے عمل سے اب تک درجنوں پروازیں منسوخ ہو چکی ہیں جس کے باعث مسافر خوار ہو کر رہ گئے ہیں۔ کسی کا ویزا ختم تو کوئی عمرہ ادا نہیں کر سکا‘ بیرون ملک جانے والوں کو نوکریوں کے لالے پڑ گئے۔ تفصیلات کے مطابق پی آئی اے کی نجکاری کے فیصلہ سے ملازمین کے ساتھ ساتھ شہری بھی ذہنی اذیت میں مبتلا ہو گئے ہیں۔ محنت مزدوری کی غرض سے بیرون ملک جانے والے پاکستانیوں کے ویزوں کی مدت ختم ہونے لگی اور انہیں زندگی بھرکی جمع پونجی ضائع ہونے کا اندیشہ ہے۔ اوورسیز پاکستانی جو ملکی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں۔ اپنوں میں چند روز گزارنے کے بعد روزگار کے لیے دیارغیر میں واپس جانے لگے تو پی آئی اے کے فلائٹ آپریشن کی منسوخی نے انہیں شدید پریشانی میں مبتلا کرکے رکھ دیا۔ کسی کے ویزے کی مدت ختم ہو چکی ہے تو کوئی دوگنا قیمت پر ٹکٹ خریدنے پر مجبور ہے۔ دوسری جانب اندرون ملک سفر کرنے والے شہریوں کو بھی شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ شاہین ایئرلائن کی کوئٹہ جانے والی پرواز کے مسافروں کو چھے گھنٹے تک انتظار کرانے کے بعد یہ اطلاع دی گئی کہ کوئٹہ میں ایئرپورٹ کی پارکنگ میں پی آئی اے کے طیارے کھڑے ہیں اس لیے کسی اور طیارے کی لینڈنگ نہیں ہو سکتی جس پر یہ پرواز بھی منسوخ کر دی گئی۔ مسافروں کا کہنا ہے کہ اب انہیں کوئٹہ کا بیس گھنٹے کا سفر بائی روڈ کرنا پڑے گا۔ پی آئی اے ملازمین کے احتجاج اور فلائٹ آپریشن منسوخ ہونے کے بعد حکومت کی جانب سے مسافروں کے لیے متبادل انتظامات کے دعوے تو کیے گئے لیکن اصل صورتحال حکومتی دعووں کے بالکل برعکس ہے۔ دوسری جانب پاکستان انٹرنیشنل ائیر لائن کوفضائی آپریشن معطل ہونے سے شدید خسارے کا سامنا ہے۔ قومی ایئر لائن کی جہاں عزت داو¿ پر لگی ہے وہیں اسے پانچ دن میں مجموعی طور پر اربوں روپے کا نقصان ہوا ہے۔ پی آئی اے کی نجکاری کےخلاف جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے احتجاج اور ہڑتال کے باعث فلائٹ آپریشن بند ہونے سے اب تک تین سو سے زائد پروازیں منسوخ ہو چکی ہیں جس سے ائیر لائن کو مجموعی طور پر آٹھ ارب روپے کا نقصان ہو چکا ہے۔ ذرائع کے مطابق اس صورتحال کے باعث کمپنی کے پاس فروری اور مارچ کی تنخواہیں تک دینے کے پیسے نہیں ہیں۔ اس کے علاوہ پی آئی اے کیبن اور کاک پٹ کریو کے درجنوں ملازمین جدہ، لندن، ٹورنٹو اور نیویارک میں محصور ہو کر رہ گئے ہیں جن کے ہوٹل میں قیام اور الاو¿نسز کی مد میں یومیہ لاکھوں روپے کا بل بن رہا ہے۔ دوفروری سے ائیرپورٹس پر کھڑے پانچ جہازوں میں مسافروں کاسامان بھی موجود ہے جبکہ ائیر کارگو کلائنٹس نے نجی ائیر لائنز سے رجوع کر لیا ہے جس کی وجہ سے پی آئی اے کوڈھائی کروڑ کا نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ یہی نہیں ہڑتال جاری رہی تو لیز پر لیے گئے سولہ طیارے بھی واپس کرنے پڑ جائیں گے۔