Friday, January 28, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

طیارے نے 13375 فٹ کی بلندی پر روانی سے پرواز کی جس کے بعد بایاں انجن بند ہوگیا : ابتدائی رپورٹ

طیارے نے 13375 فٹ کی بلندی پر روانی سے پرواز کی جس کے بعد بایاں انجن بند ہوگیا : ابتدائی رپورٹ
December 9, 2016

اسلام آباد(92نیوز)حادثے کا شکارہونےوالےطیارے’اے ٹی آر فورٹی ٹو نے تیرہ ہزار تین سو پچھہتر فٹ کی بلندی تک روانی سے پرواز کی جس کے بعد اس کےبائیں  انجن نےکام کرنا چھوڑ دیا۔انجن کے دھماکےنےوِنگ کو نقصان پہنچایااورطیارہ بےقابوہوکرگرگیا۔ یہ انکشاف سول ایوی ایشن اتھارٹی نےاپنی ابتدائی رپورٹ میں کیاہےجبکہ قومی ائیر لائن نےابھی تک کوئی رپورٹ جاری نہیں کی۔

اےٹی آرطیارےکےدونوں انجن بھی بندہوجائیں توطیارہ گلائیڈکرسکتاہے۔لیکن حویلیاں کی پہاڑیوں میں گرکرراکھ  ہونےوالاطیارہ کیوں نہ زمین پراپنےقدم جماسکا ۔ اس کا جواب سول  ایوی ایشن نےاپنی ابتدائی رپورٹ میں دیاہے۔جس میں کہا گیاہےکہ پروازکےدوران طیارےکےبائیں انجن نےاچانک کام کرناچھوڑ دیا اور دھماکےسےپھٹ گیا۔جس سےونگ کونقصان پہنچااورآگ بھڑک اٹھی۔جس کےبعد طیارہ گلائیڈکرنےکی بجائے موت کی وادیوں میں کھوگیا۔  سول ایوی ایشن کی رپورٹ کےمطابق چاربچ کربارہ منٹ پرجہازغیرمتوازن ہونا شروع ہوا۔جس کےفورابعد پائلٹ نے ایک انجن خراب ہوجانے کی رپورٹ دی۔ خرابی سامنےآنےکےبعدجہاز چند ملی سیکنڈز کےلئےمستحکم رہااورپائلٹ نے اس پر دوبارہ کنٹرول بھی حاصل کرلیاتھا۔لیکن  اسی دوران طیارہ تیزی سےنیچےآیااورچانک ریڈارسے غائب ہوگیا۔پھرچندلمحوں میں ہی اپنی اونچائی کھوتے ہوئے پہاڑوں پر جاگرا

رپورٹ میں کہاگیا ہےکہ اگر اے ٹی آر کے دونوں انجن بند ہوجائیں یا کام کرنا چھوڑ دیں، تب بھی یہ طیارہ گلائیڈ کرسکتاہے۔پائلٹس کےپاس جہاز کا انجن بند کرنےکا طریقہ ہوتا ہے۔اس سےقبل  جہاز کی اونچائی اور رفتار کم کی جاتی ہے تاکہ  باہر کی صورتحال کی ایروڈائنامکس سےہم آہنگی ہوسکے۔اورپی کے سکس سکس ون کے پائلٹس نےایسا ہی کیاتھا۔لیکن خراب انجن  پہلے ہی پھٹ کر ونگ کو نقصان پہنچا چکا تھاجس کی وجہ سےطیارہ بےقابوہوکرگرگیا۔ رپورٹ کے مطابق طیارہ اچھی اونچائی اور رفتار پر پرواز کر رہا تھا اس لئے اس کی راہ میں رکاوٹ آنے کے کوئی امکانات نہیں تھےجبکہ جہاز کا ایندھن بھی کم نہ تھا۔ رپورٹ میں کہاگیاہےکہ حادثے کا شکار ہونے سے قبل یہ جہاز اٹھارہ ہزارسات سو چالیس گھنٹوں کی مسافت طےکرچکا تھا۔حادثے سےپہلےموسم بھی معمول کے مطابق تھاجبکہ طیارے کے پائلٹ کو شمالی علاقوں کا وسیع تجربہ تھا۔ان تمام باتوں کودیکھتے ہوئےطیارہ حادثے کی مکمل تفصیلات بلیک باکس سے حاصل ہونے والی معلومات کی ڈی کوڈنگ کےبعد ہی ممکن ہوگی۔  رپورٹ کےمطابق اے ٹی آر فورٹی ٹو سیریز فائیو ہنڈرڈٖ ایئرکرافٹ کے حالیہ  ورژنز میں سےایک ہے۔پی آئی اےکویہ طیارہ چودہ مئی دوہزار سات کو دیاگیا ۔ اس جہازکا انجن دوہزار چودہ میں بھی ایک بار خراب ہوا تھا، جس کےبعد اسے تبدیل کردیا گیا۔جہاز کا انجن محفوظ اورمضبوط ہونےکاسرٹیفکیٹ بھی موجودتھا۔