Tuesday, January 18, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

صوبائی دارالحکومت میں حوا کی ایک اور بیٹی کی عزت حکمران جماعت کے عہدیدار نے تارتارکردی

صوبائی دارالحکومت میں حوا کی ایک اور بیٹی کی عزت حکمران جماعت کے عہدیدار نے تارتارکردی
December 26, 2015
لاہور(92نیوز)صوبائی دارالحکومت میں حوا کی ایک اور بیٹی کی عزت حکمران جماعت کے عہدیدار نےساتھیوں سے مل کرلوٹ لی۔۔پولیس نے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بننے والی پندرہ سالہ لڑکی کا بیان قلمبند کرلیا۔ مرکزی ملزم میاں عدنان مسلم لیگ نون یوتھ ونگ پنجاب کاعہدیدار ہے اورابھی تک اسے گرفتارنہیں کیا جاسکا۔ تفصیلات کےمطابق کار سوار اوباشوں نے لاہور کے علاقے چوہنگ سے پندرہ سالہ لڑکی کو اغوا کیا اپرمال پر واقع ایک گیسٹ ہاؤس میں لے گئے اور اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا دیا لڑکی نے موقع ملتے ہی پولیس کو اطلاع کر دی۔ پولیس نے چھاپہ مار کر مغویہ کو بازیاب کراتے ہوئے ملزم بلال، ماجد اور حارث سمیت چھے ملزمان حراست میں لے لیے۔ میڈیکل رپورٹ میں لڑکی سے زیادتی ثابت ہو گئی زیادتی کا شکار ہونے والی لڑکی نے اپنے ابتدائی بیان میں بتایا کہ مرکزی ملزم میاں عدنان نامی شخص نے اسے گھر کے باہر سے اغواءکیا اور ہوٹل میں لے جا کر اپنے ساتھیوں کے ساتھ مل کر اس کی عزت تارتار کر دی۔ پولیس کے مطابق لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے ملزمان آٹھ سے زیادہ ہیں جن میں چار نامعلوم ہیں مرکزی ملزم میاں عدنان کے بارے میں انکشاف ہوا ہے کہ وہ مسلم لیگ نون یوتھ ونگ پنجاب کا ایڈیشنل سیکرٹری ہے۔ اجتماعی زیادتی کے واقعہ کی اطلاع ملنے پر وزیراعلیٰ پنجاب نے نوٹس لیتے ہوئے سی سی پی او لاہور امین وینس سے رپورٹ طلب کر لی۔ پولیس نے روایتی طریقہ اپناتے ہوئے وزیراعلیٰ کے نوٹس کے بعد مرکزی ملزم کی گرفتاری کے لیے تین ٹیمیں تشکیل دے دی ہیں۔ سوال یہ ہے کہ پنجاب میں ہر زیادتی کے واقعہ کے بعد ارباب اختیار سے رپورٹ طلب کی جاتی ہے اور ٹیمیں بھی بنائی جاتی ہیں آخر ایسی کونسی وجوہات ہیں کہ مجرم ہمیشہ عبرتناک سزا سے بچ جاتے ہیں۔ حوا کی بیٹی کی عزت نوچنے میں حکمران جماعت کے عہدیدار کا ملوث ہونا کئی سوالوں کو جنم دیتا ہے۔ واضح رہے کہ حکومتی عہدیدار عادی مجرم ہے اوراس سے پہلے بھی قتل کیس میں جیل جاچکا ہے ۔