Saturday, December 4, 2021
English News آج کا اخبار براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی
English News آج کا اخبار
براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی

سرکاری تھرمل بجلی گھروں کی انتظامیہ پوری صلاحیت سے نہیں چلاتی  : نیپرا کا انکشاف

سرکاری تھرمل بجلی گھروں کی انتظامیہ پوری صلاحیت سے نہیں چلاتی  : نیپرا کا انکشاف
September 3, 2015
اسلام آباد(92نیوز)نیپرا نے انکشاف کیا ہے کہ سرکاری تھرمل بجلی گھروں کی انتظامیہ تیل چوری اور مرمت کے نام پر کی گئی ہیرا پھیری چھپانے کے لیے بجلی گھروں کو پوری صلاحیت سے نہیں چلاتی۔ تفصیلات کےمطابق ویسے تو سرکاری تھرمل پاور پلانٹس کی بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت4 ہزار 7 سو میگاواٹ ہے لیکن یہ پاور کمپنیاں 1 ہزار 700 میگاواٹ سے زائد بجلی پیدا نہیں کرتیں نیپرا کی دستاویزات میں انکشاف ہوا ہے کہ سرکاری تھرمل پاور پلانٹس انتظامیہ بجلی گھروں کو انڈر لوڈ رکھنے میں ملوث  ہے کیونکہ ان بجلی گھروں کو فراہم کیے جانے والےتیل کی چوری کو چھپایا جاتا ہے یہی وجہ ہے کہ جامشورو پاور کمپنی کو گذشتہ 5 برسوں میں مقررہ صلاحیت سے چلایا ہی نہیں گیا ان پاور پلانٹس سے75 فی صد کی بجاے 36 فی صد بجلی پیدا کی گئی۔ مکمل  صلاحیت سے پیدا وار نہ لینے سے بجلی کی پیداواری لاگت 22 روپے فی یونٹ تک ہو چکی ہے۔ نیپرا نے مزید انکشاف کیا ہےکہ جامشورو پاور کمپنی میں فالتو ملازمین کی تعداد دو گنا ہےمعیار کے مطابق ایک میگاواٹ بجلی کی پیداوار کے لیے صرف 1 ملازم کافی ہے لیکن جامشورو پاور کمپنی میں ملازمین کی تعداد 15سو 78 ہے جن کی سالانہ تنخواہوں کا بل 1 ارب 38 کروڑ روپے ہے جو بجلی کی لاگت میں اضافے کا باعث بن رہا ہے نیپرا نے ہدایت کی ہے کہ جامشورو پاور کمپنی سے فالتو ملازمین فارغ کئے جائیں اور کمپنی میں ری سٹرکچرنگ 31 دسمبر تک مکمل کی جائے۔