Monday, October 3, 2022

سابق سٹی ناظم نعمت اللہ خان انتقال کر گئے

سابق سٹی ناظم نعمت اللہ خان انتقال کر گئے
کراچی ( 92 نیوز) سابق سٹی ناظم نعمت اللہ خان انتقال کر گئے ،ترجمان جماعت اسلامی کے مطابق نعمت اللہ خان  کافی عرصہ سے علیل اور کلفٹن کے نجی اسپتال میں زیر  علاج تھے۔ تحریک پاکستان کے کارکن، جماعت اسلامی کے دیرینہ ساتھی اور کراچی کے پہلے ناظم نعمت اللہ خان اب ہم میں نہیں رہے ، مرحوم بیماری کے باعث کچھ عرصہ سے کراچی کے نجی اسپتال میں زیرعلاج تھے ، جہاں آج دنیا سے رخصت ہوگئے ۔ کراچی کا ایک اور بیٹا جدا ہوگیا  ، سابق سٹی ناظم نعمت اللہ خان خالق حقیقی سے جا ملے  ، کچھ عرصہ سے بیمار نعمت اللہ خان کراچی کے نجی اسپتال  میں زیرج تھے ۔ یکم اکتوبر 1930 کو اجمیرشریف میں پیدا ہونے والے نعمت اللہ خان نے ابتدائی تعلیم اجمیر اور شاہجہاں پور میں حاصل کی ، صرف 15 سال کی عمر میں ہی تحریک پاکستان کے فعال کارکن کی حیثیت سے خود کو منوایا تھا  اور قائد اعظم کی سربراہی میں "آل انڈیا مسلم  لیجسلیٹرز کانفرنس" میں بھی شرکت کی تھی، اور 1946 سے قیام پاکستان تک مسلم لیگ نیشنل گارڈ ضلع اجمیر کے منتخب صدر رہے ۔ پاکستان ہجرت کے بعد پنجاب یونیورسٹی سے گریجویشن کیا  ،  اور فارسی لٹریچر میں ماسٹر ڈگری کراچی یونیورسٹی سے حاصل کی  ، نعمت اللہ خان نے جامعہ کراچی سے صحافت میں ڈپلومہ اور ایل ایل بی  کا امتحان پاس کیا  جبکہ 1957 میں جماعت اسلامی میں شمولیت اختیار کی   جس کیلئے رکنیت سازی کا حلف خانہ کعبہ میں اٹھایا ۔ نعمت اللہ خان 1985 کے غیرجماعتی الیکشن سندھ اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے  جبکہ غریب اور کم آمدن طبقے کیلئے کئی ویلفیئر اسکیمیں بھی بنائیں  ، 1996 میں سندھ میں سیلاب کے دوران ریلیف آپریشن میں پیش پیش تھے  ، 1997 میں ہرنائی میں زلزلے کے دوران دکھی انسانیت کے زخموں پر مرہم رکھا  ، 1998 میں تربت اور گوادر میں سیلاب کےدوران بھی بھرپور خدمات انجام دیں  اور 2001 سے 2005 تک کراچی کے پہلے ناظم کے طور پر شہر کی خدمت کی ۔ نعمت اللہ خان کے 7 بیٹے اور 2 بیٹیاں ہیں  جن کی کراچی آمد کے بعد بدھ کو نمازجنازہ اور تدفین کی جائے گی ۔ امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے نعمت اللہ خان کی کی وفات کو کراچی اور جماعت کے لئے بڑا نقصان قرار دے دیا ، کہا کہ نعمت اللہ کا جیسا ظاہر خوبصورت تھا ویسا ہی ان کا باطن بھی خوبصورت تھا، گورنر سندھ نے بھی سابق سٹی ناظم کے انتقال پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ  کراچی کی تعمیر و ترقی میں ان کی کاوشوں کو فراموش نہیں کیا جاسکتا۔ عمران اسماعیل نے نعمت اللہ خان کی مغفرت،درجات کی بلندی اور لواحقین کو صبر جمیل عطا کرنے کی  دعا بھی کی ۔ نعمت اللہ خان  یکم اکتوبر 1930 کو اجمیر شریف میں پیدا ہوئے ،  ابتدائی تعلیم  اجمیر اور شاہجہاں پور سے حاصل کی۔ نعمت اللہ خان 15 سال کی عمر میں ہی تحریک پاکستان کے فعال کارکن تھے، انہوں نے  قائد اعظم کی سربراہی میں "آل انڈیا مسلم لیجسلیٹرز کانفرنس" میں شرکت کی ۔   پاکستان ہجرت کے بعد پنجاب یونیورسٹی سے گریجویشن کیا ، فارسی لٹریچر میں ماسٹر ڈگری کراچی یونیورسٹی سے حاصل کی ۔ وہ  2001 سے 2005 تک کراچی کے پہلے ناظم رہے، نعمت اللہ خان الخدمت فاؤنڈیشن کیلئے بھی خدمات انجام دیں،وہ پیشے کے اعتبار سے وکیل تھے۔