Tuesday, January 25, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

'رواں سال چین سے گوادر تک کارگو کی ترسیل شروع ہو جائیگی '

'رواں سال چین سے گوادر تک کارگو کی ترسیل شروع ہو جائیگی '
April 12, 2016
گوادر (92نیوز) چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف نے کہا ہے کہ دشمن انٹیلی جنس ایجنسیاں پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے کے خلاف ہیں۔ رواں سال چین سے گوادر تک کارگو کی ترسیل شروع ہو جائے گی۔ بھارتی ایجنسی ”را“ پاکستان کو غیرمستحکم کرنے میں ملوث ہے۔ آپریشن ضرب عضب ایک آپریشن نہیں بلکہ سوچ کا نام ہے۔ دہشت گردی‘ شدت پسندی اور کرپشن کا خاتمہ بنیادی مقصد ہے۔ تفصیلات کے مطابق گوادرمیں ”بلوچستان میں امن اور ترقی” کے موضوع پر منعقد ہونے والے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے کہا کہ اقتصادی راہداری منصوبہ پورے خطے کی ترقی اور استحکام کا ضامن ہے۔ سی پیک ہمارا قومی عزم ہے جسے ہر قیمت پر عملی جامہ پہنائیں گے۔ خطے میں اپنا اثرورسوخ بڑھانے کے خواہش مند ممالک سی پیک سے پریشان ہیں۔ جنرل راحیل شریف نے کہا سب جانتے ہیں کہ جارحانہ مزاج رکھنے والی انٹیلی جنس ایجنسیاں اس عظیم منصوبے کے خلاف ہیں۔ بھارتی ایجنسی ”را“ پاکستان کو غیرمستحکم کرنے میں ملوث ہے لیکن ہم کسی کو پاکستان میں مسائل اور مشکلات پیدا کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ بطور آرمی چیف یقین دلاتا ہوں کہ سی پیک کے تحفظ میں کوئی کسر اٹھا نہیں رکھیں گے جبکہ بلوچ عوام کو بھی یقین دلاتا ہوں کہ منصوبے کے سب سے زیادہ فوائد انہیں ہی حاصل ہوں گے۔ ضروری ہے کہ سب محاذ آرائی چھوڑ کر تعاون پر توجہ دیں۔ آرمی چیف کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کے بعد ترقی میں ہم بہت آگے بڑھ چکے ہیں۔ ضرب عضب صرف آپریشن نہیں مکمل نظریہ ہے جو اب آخری مراحل میں داخل ہوچکا ہے۔ ضرب عضب کا مطلب دہشت گردی اورکرپشن کا خاتمہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں دہشت گردی کےخلاف ایک مشکل جنگ سے گزرنا پڑا۔ عالمی برادری پاکستان کی قربانیاں اورکامیابیاں تسلیم کرے اور دہشت گردوں کی بیرونی مدد روکنے میں بھی مدد کرے۔ سیمینارمیں وزیراعلیٰ نواب ثنا اللہ زہری، صوبائی وزرائ، ڈپٹی چیرمین سینیٹ مولاناعبدالغفورحیدری، مشیرقومی سلامتی لیفٹیننٹ جنرل (ر) ناصر جنجوعہ، کمانڈرسدرن کمانڈلیفٹیننٹ جنرل عامرریاض کے علاوہ غیرملکی سفارت کاروں، اہم سیاسی رہنماو¿ں سمیت ماہرین تعلیم وترقی نے بھی شرکت کی۔