Saturday, January 28, 2023

راج کمار ہرانی پربھی جنسی ہراسگی کے الزام کی زد میں آگئے

راج کمار ہرانی پربھی جنسی ہراسگی کے الزام کی زد میں آگئے
ممبئی ( ویب ڈیسک ) جنسی ہراسگی کے الزامات بالی ووڈ انڈسٹری کو بری طرح ہلا چکے ہیں اور اس سلسلے میں ایسے ایسے نام سامنے آرہے ہیں کہ دیکھنے اور سننے والوں کو یقین کرنا مشکل ہو گیا ہے ۔ بالی ووڈ انڈسٹری کے  نیک نام نانا پاٹیکر جیسے نام  سامنے آنے کے بعد اب خاتون کی جانب سے راج کمار ہرانی پر بھی جنسی ہراسگی کا الزام عائد کر دیا گیا ہے ۔ راج کمار ہرانی بالی ووڈ انڈسٹری  میں خواتین سے احسن انداز سے پیش آنے والے شخص کے طور پر جانے جاتے ہیں ۔ فلم ساز راج کمار ہرانی  پر اپنے کیریئر میں پہلی مرتبہ جنسی ہراسگی کا الزام عائد  ہوا ہے اور الزام عائد کرنے والی ان کی اپنی ہی کمپنی کی ملازمہ ہے ۔ گزشتہ برس می ٹو مہم کے بعد بالی ووڈ کے ساجد خان ، سبھاش گھئی ، اور وکلاس بہل  جب کہ بالی ووڈ کے سنسکاری باؤ جی الوک ناتھ ، نانا پاٹیکر  سمیت سنگرزپر بھی خواتین نے جنسی ہراسگی کے الزامات عائد کئے ۔ راج کمار ہرانی پر  خاتون کی جانب سے فلم سنجو کی  میکنگ کے دوران جنسی  ہراسگی کے الزامات عائد کئے گئے  ،خاتون کا کہنا ہے کہ انہوں نے  فلم  کی ٹیم کو گزشتہ برس نومبر میں ہی مطلع کر دیا تھا ۔ بھاری میڈیا کی جانب سے ہراساں کرنے والی خاتون کی شناخت  نہیں کی گئی ، بس اتنا بتایا گیا کہ خاتون سنجو فلم کی پروڈکشن کے دوران  کمپنی میں کام کر رہی تھی ۔ تال،رام لکھن اور کرما جیسی سپر ڈوپر ہٹ  فلمیں بنانے والے سبھاش گھئی بھی اس الزام کی زد میں ہیں،کامیڈی فلموں کے بےتاج بادشاہ پروڈیوسر، ساجد خان بھی اب اس الزام سے منہ چھپاتے پھر رہے ہیں  ۔ می ٹو مہم کی حمایت کرتے ہوئے عامر خان نے سبھاش گھئی کی فلم مغل جبکہ اکشے کمار نے ساجد خان کی فلم ہاؤس فلم فور میں کام کرنے سے انکار کردیا تھا۔