Saturday, October 1, 2022

دنیا بھر میں اس وقت چار کروڑ لوگ جدید دور کے غلام کی حیثیت سے کام کررہے ہیں

دنیا بھر میں اس وقت چار کروڑ لوگ جدید دور کے غلام کی حیثیت سے کام کررہے ہیں
لاہور(ویب ڈیسک)انسانی حقوق کے تحفظ کی تنظیم کے مطابق دنیا میں  اس وقت بھی ساڑھے چار کروڑ لوگ ’جدید دور کے غلام‘ کی حیثیت سے کام کر رہے ہیں۔ان کی سب سے بڑی تعداد بھارت میں ہے جہاں ایک کروڑ اسی لاکھ افراد غلامی کی زندگی گزار رہے ہیں ۔ تفصیلات کےمطابق سڈنی میں قائم واک فری فاونڈیشن کے 2016 کے  عالمی انڈیکس کے مطابق  ساڑھے چار کروڑ  جدید غلاموں میں  مردوں کے علاوہ خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔ان  لوگوں سے  اس جدید دور میں فیکٹریوں، فارمز اور کانوں میں جبری مشقت کروائی جاتی ہے۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس قسم کی غلامی میں پھنسے ہوئے سب سے زیادہ افراد ایشیا میں ہیں ۔رپورٹ کے مطابق بھارت دنیا میں غلامی میں جکڑے ہوئے ایک کروڑ 80 لاکھ افراد کی وجہ سے پہلے نمبر ہے۔ دوسرے نمبر پر چین ہے جہاں 30 لاکھ سے زیادہ افراد اس قسم کی جبری مشقت کر رہے ہیں جبکہ پاکستان 20 لاکھ سے زائد ایسے ’غلاموں‘ کے ساتھ تیسرے نمبر پر ہے۔اس کے علاوہ بنگلہ دیش بھی پہلے دس ممالک میں شامل ہے۔۔یہ رپورٹ  167 ممالک میں 53 زبانوں میں 42 ہزار انٹرویوز کی بنیاد پرتیار کی  گئی ہے۔ رپورٹ میں جدید غلامی کی تشریح کچھ اس طرح سے کی گئی ہے کہ ایسا  شخص جو دھونس  دھمکی ، تشدد، طاقت کے غلط استعمال یا دھوکے کی وجہ سے کام  نہ چھوڑ سکے اور قرض دار ہونے کی وجہ سے اسے ذاتی ملازم بنا کر رکھا جائے۔