Thursday, October 6, 2022

خواتین ارکان سندھ اسمبلی کے نام پر کروڑوں کے فنڈز جاری ، خواتین لاعلم

خواتین ارکان سندھ اسمبلی کے نام پر کروڑوں کے فنڈز جاری ، خواتین لاعلم

کراچی ( 92 نیوز ) سندھ میں مبینہ جعلسازی کی غضب کہانی سامنے آ گئی ۔ خواتین ارکان سندھ اسمبلی کے نام پرکروڑوں روپے کےفنڈزجاری ہونے کا انکشاف ہوا ہے ۔ مگر ان فنڈز سے خود مذکورہ ارکان اسمبلی لا علم ہیں ۔اپوزیشن ارکان نے اسکیم دی نہ متعلقہ محکمےسے رابطہ کیا محکمہ خزانہ نے بغیر منظوری اورمشاورت کےکروڑوں روپے جاری کردیئے ۔ کراچی حیدرآباد کی ارکان کے فنڈز مبینہ جعلسازی سے سکھر میں خرچ کر دیئے گئے ۔
خواتین اپوزیشن ارکان حیران پریشان ہیں کہ نہ کوئی اسکیم دی نہ متعلقہ محکمہ سےرابطہ کیا اور محکمہ خزانہ نے خزانے کے منہ کھول دئے ۔ خواتین ارکان کے نام پر کروڑوں روپے کے فنڈز جاری کردئے گئے۔ مستعفی رکن اسمبلی بلقیس مختار کے نام پر فنڈز جاری ہوئے ۔
مبینہ جعلسازی کی غضب کہانی یہی ختم نہیں ہوتی بلکہ کراچی حیدرآباد کی اراکین کے فنڈز مبینہ جعلسازی سے سکھر میں خرچ کردئے گئے ۔
رعنا انصار کے نام پر ساڑھے 7 ملین سکھر میں خرچ دکھائے گئے ۔ سمیتا افضال کے نام پردرگاہ محب شاہ روہڑی کےلیے ساڑھے 7 ملین جاری ہوئے ۔ 92نیوز نے خبر نشرکی توسندھ اسمبلی میں شورشرابہ ہوگیا۔
ہیرسوہونے کہاکہ انہوں نے کمیونٹی ڈویلپمنٹ پروگرام کی کوئی اسکیم ہی جمع نہیں کرائی پھران کےنام پرفنڈ کس طرح جاری ہوئے۔ ہیر سوہو کے فنڈز لیپ ٹاپ خریداری میں استعمال ہوئے۔خواتین اراکین نے فنڈز جاری کرنے کی تحقیقات کامطالبہ کیاہے۔