Tuesday, January 25, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

جے آئی ٹی رپورٹ میں شریف خاندان کے کاروبار سے جڑے تمام کرداروں کا ذکر

جے آئی ٹی رپورٹ میں شریف خاندان کے کاروبار سے جڑے تمام کرداروں کا ذکر
July 11, 2017

اسلام آباد(92نیوز)جے آئی ٹی نے شریف خاندان کے کاروبار سے جڑے تمام کرداروں کا باقاعدہ ذکر کیا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم کے والد میاں شریف مرحوم کے اثاثے بھی آمدن سے مطابقت نہیں رکھتے۔ وزیراعظم کی اہلیہ بیگم کلثوم نواز اور دوسری صاحبزادی اسماءنواز کے اثاثے بھی بے شمار بڑھے۔ نوازشریف کے سمدھی اسحاق ڈاراور داماد کیپٹن ریٹائرڈ صفدرنے بھی گوشوارے جمع نہیں کرائے۔

تفصیلات کےمطابق نوازشریف وزیراعظم بنے تو میاں محمد شریف کے اثاثے تیزی سے بڑھے۔انہوں نے اپنے کاروبار کے بیشتر دورانیے میں انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کرائے۔ جے آئی ٹی نے تحقیقاتی رپورٹ میں شریف خاندان کے کاروبار سے جڑے افراد کے بارے میں بھی سب بتادیا۔

رپورٹ کے مطابق وزیراعظم کے داماد کیپٹن(ر)صفدر 2008ءمیں رکن قومی اسمبلی بنے۔ انہوں نے گوشوارے جمع نہیں کرائے لیکن تنخواہ لیتے رہے۔وزیراعظم کی دوسری صاحبزادی اسماءنوازکے اثاثوں کی مالیت 1991اور 1992ءمیں 14لاکھ 70ہزار روپے تھی نامعلوم ذرائع آمدن کے باعث ایک سال میں اثاثے 3 کروڑ 15 لاکھ روپے مالیت تک جا پہنچنے۔۔

وزیر اعظم کی اہلیہ کلثوم نواز 1984 ءسے خاندان کے کاروبار سے منسلک ہوئیں 1985 ءکے گوشواروں کے مطابق کلثوم نواز کے اثاثے 7 لاکھ 74 ہزار روپے تھے ۔1992اور 1993ءمیں ان کے اثاثے 17.5گنا اضافے کے ساتھ 2کروڑ سے زیادہ ہوگئے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اسحاق ڈار نے 1981 سے 2001 تک کوئی انکم ٹیکس گوشوارہ جمع نہیں کرایا۔۔۔ماہر اقتصادیات ہونے اور اقتدار میں رہنے کے باوجود ایسے اقدامات ٹیکس چوری کے مترادف ہے۔۔2008 اور 2009 میں اسحاق ڈار کے اثاثے تیزی سے بڑھے۔ اسحاق ڈار نے 16 کروڑ سے زائد کی رقم خیرات کی یہ خیراتی رقم انہوں نے اپنی ہی تنظیم کو دی اس رقم سے ٹیکس چھوٹ حاصل کی گئی جو ٹیکس چوری کے زمرے میں آتا ہے۔ جے آئی ٹی کی رپورٹ کے مطابق نیشنل بنک کے صدر سعید احمد 2015 ءسے قبل ٹیکس دہندہ نہیں تھے۔ سعید احمد نے 2014 اور 2015 کے انکم ٹیکس گوشواروں میں بیرون ملک 2 کروڑ سے زائد کی آمدن ظاہر کی۔۔انہوں نے بھی آمدن کے ذرئع چھپائے۔