Wednesday, October 5, 2022

تاجروں کی ملک گیر ہڑتال کا دوسرا روز، مارکیٹوں اور منڈیوں میں دکانیں آج بھی نہ کھلیں

تاجروں کی ملک گیر ہڑتال کا دوسرا روز، مارکیٹوں اور منڈیوں میں دکانیں آج بھی نہ کھلیں
 اسلام آباد (92 نیوز) تاجروں کی ملک گیر ہڑتال کا آج دوسرا روز ہے۔ بازاروں ، مارکیٹوں اور منڈیوں میں دکانیں آج بھی نہ کھلیں۔ تاجر رہنماؤں نے تنازع حل نہ ہونے پر غیر معینہ مدت تک شٹرڈاؤن کا عندیہ دے دیا۔ آئندہ کا لائحہ عمل آج طے ہو گا۔ ہڑتال کے باعث حکومت کو ٹیکس کی مد میں چار ارب روپے کا نقصان ہو چکا ہے۔ حکومتی پالیسیوں کے خلاف تاجر برادری سراپا احتجاج ہے ۔ تاجروں کی جانب سے حکومت سے متعدد بار نرمی کی درخواست کے بعد آج بھی شہر شہر شٹر ڈاؤن  ہڑتال کی جا رہی ہے ، الیکٹرانکس ، ٹمبر موبائل فون سمیت تمام چھوٹی و بڑی مارکیٹوں کے تمام شٹر آج بند ہیں ۔ ادھر ملک گیر ہڑتال کی کال پر فیصل آباد ڈویژن میں تاجروں نے شٹرڈاؤن رکھا ہے ، فیصل آباد میں جامعہ گلی ، مکی مارکیٹ، مندر گلی، گوردوارہ گلی سمیت کپڑے کی ہول سیل مارکیٹس بند ہیں ۔ گرے کلاتھ ، یارن مارکیٹ اور جیولرز مارکیٹ بند ہیں اور تاجروں نے مطالبات کے حق میں آواز بلند کی۔ دوسری طرف پشاور میں تاجروں تنظیموں کی کال پر شہر کی بڑی تجارتی مارکیٹیں شعبہ، خیبر بازار، اشرف روڈ ، قصہ خوانی، چوک یادگار، نمک منڈی، شعبہ بازار میں کاروباری مراکز بند ہیں، تاجروں نے پیپل منڈی چوک میں احتجاجی کیمپ بھی لگایا۔ تاجروں کا مطالبہ ہے کہ خریداری کے لئے شناختی کارڈ کی شرط اور ٹیکس میں اضافہ واپس لیا جائے ، تاجروں کے لئے فکس ٹیکس اسکیم دی جائے، 12 لاکھ تک آمدن کو ٹیکس سے استثنٰی بحال کیا جائے۔