Tuesday, January 25, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

بھارتی فوج نے جنگی سامان کے سودوں میں اربوں روپے کمیشن کھایا : پاناما لیکس

بھارتی فوج نے جنگی سامان کے سودوں میں اربوں روپے کمیشن کھایا : پاناما لیکس
April 6, 2016
ممبئی (ویب ڈیسک) پاناما لیکس نے پاکستان ہی نہیں بھارت کے بھی درودیوار ہلا کر رکھ دیے۔ بھارتی فوج اور سابق حکومتیں پاناما لیکس کی زد میں آگئی ہیں۔ دو ہزار سے دوہزار چار تک بھارتی بحریہ اور فضائیہ کے لئے اٹلی سے خریدے گئے سو ارب روپے کے جنگی سامان کے سودے میں ایک ارب ستر کروڑ روپے کمیشن ادا کئے جانے کا انکشاف ہوا ہے۔ بھارتی فوج کے لئے جنگی سامان کی خریداری میں رشوت اور کک بیکس معمول کی بات ہیں۔ رشوت اور کمیشن کا سب سے بڑا ”بوفورس اسکینڈل“ ابھی تک بھارتی عوام اور میڈیا کو نہیں بھولا تھا کہ ایک اور اسکینڈل سامنے آ گیا۔ پاناما لیکس نے بھارت کی اہم کاروباری اور فلمی شخصیات کے ساتھ ساتھ بھارتی فوج کا بھانڈا بھی پھوڑ دیا۔ بھارتی فوج نے سنہ دو ہزار سے دو ہزار چار تک اٹلی سے جنگی سامان خریدا جس کے لئے پاناما میں رجسٹرڈ ایک کمپنی انٹر ٹریڈ پروجیکٹس کنسلٹنٹس لمیٹڈ نے مڈل مین فرم کا کردار ادا کیا۔ اس کمپنی کے مالکان بھارتی ہیں۔ پاناما میں جب کمپنی رجسٹرڈ ہوئی تو آئی کے گجرال بھارت کے وزیراعظم تھے تاہم اس کمپنی نے جب اٹلی کی اسلحہ ساز کمپنی الیٹرونیکا کے ساتھ جنگی سامان کی ترسیل کا معاہدہ کیا تو واجپائی کی حکومت تھی۔ اسی دور میں ایک ہزار کروڑ کے سودے میں سترہ فیصد کمیشن لیا گیا جو پاناما میں وصول کیا گیا۔ اس کے بعد بھی یہ کمپنی سونیا گاندھی کی سربراہی میں بننے والے سیاسی اتحاد یونائیٹڈ پروگریسو فرنٹ کی حکومت میں کام کرتی رہی جس سے ثابت ہوتا ہے کہ اس کمپنی کو بھارت میں وسیع پیمانے پر سیاسی سرپرستی حاصل رہی۔ اس صورت حال میں دیکھنا ہوگا کہ کیا مودی حکومت اس رشوت ستانی پر مقدمہ بنانے کی ہمت رکھتی ہے۔