Thursday, January 20, 2022
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK) آج کا اخبار English News
English News آج کا اخبار
براہراست ٹی وی براہراست نشریات(UK)

بنی گالہ کیس، غیر قانونی تعمیرات پر جرمانہ وصول کر کے ریگولرائز کریں، سپریم کورٹ

بنی گالہ کیس، غیر قانونی تعمیرات پر جرمانہ وصول کر کے ریگولرائز کریں، سپریم کورٹ
March 6, 2018

اسلام آباد ( 92 نیوز ) سپریم کورٹ میں بنی گالا میں غیرقانونی تعمیرات سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی  ۔ چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ غیرقانونی تعمیرات پر جرمانہ یافیس وصول کریں اور انہیں ریگولرائزکریں ،  ڈیم کی زمین پر شادی گھر یا مارکیز نہیں بن سکتے۔

سپریم کورٹ میں بنی گالا غیر قانونی تعمیرات کیس کی سماعت چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کی۔ سوئی سدرن اور سوئی نادرن کے ایم ڈیز بھی عدالت میں موجودتھے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ سیاسی بنیادوں پر کوئی کنکشن دیا گیا تو کارروائی ہوگی۔عدالت نے ہر دو ماہ بعد سوئی نادرن اور سوئی سدرن کے ایم ڈیز کو رپورٹس دینےکا حکم دیااورگیس کنکشن کی حد تک مقدمہ نمٹا دیا۔

سابق چیئرمین سی ڈی اے کامران لاشاری نے عدالت کو بتایا کہ راول ڈیم کے قریب سی ڈی اے نے تفریحی پارک بنانے کا فیصلہ کیا تھا جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ جس لیز زمین پر اسپورٹس سرگرمیاں نہیں ہو رہیں وہ منسوخ کرینگے۔ ڈیم کی زمین پر شادی گھر یا مارکیز نہیں بن سکتے۔ جس مقصد کیلیے زمین لی جائے اسی کیلئے استعمال ہو گی۔

وزیرمملکت کیڈ طارق فضل چوہدری نے عدالت کو بتایا کہ بنی گالا و دیگر کی حدود میں غیر قانونی تعمیرات کا سروے کیا ہے جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ4 منٹ کا ٹی وی پر 55 لاکھ روپے میں اشتہار دیا گیا لوگوں کو تعلیم دیں، صحت دیں۔

چیف جسٹس نے عمران خان کے وکیل بابراعوان سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ شور مچا ہوا ہے آپ کے دستاویزات جعلی ہیں۔ بابراعوان نے کہا کہ یونین کونسل کے 500 روپے کے لیے ہم جعل سازی کیوں کریں؟ ،میڈیا ٹرائل ہورہا ہے۔ جب بنی گالا جائیداد خریدی اس وقت سیکرٹری محمد عمر نہیں تھا۔

چیف جسٹس نے کہا کہ آپ کا نقشہ بھی منظور نہیں ہے۔ ہم 13 مارچ کو دیکھیں گے۔ آخر میں ہم نے ہی ریگولرائز ہی کرنا ہے۔