Saturday, November 26, 2022

ایم  کیو ایم رہنما کے مبینہ  بیان  سے  متحدہ  کے گرد  گھیرا مزید تنگ  ہو گیا

ایم  کیو ایم رہنما کے مبینہ  بیان  سے  متحدہ  کے گرد  گھیرا مزید تنگ  ہو گیا
کراچی(92نیوز)ایم کیو ایم کے رہنما طارق میر کے مبینہ بیان سے متحدہ کے گرد گھیرا مزید تنگ ہوگیا۔ تفصیلات کے مطابق ایم کیو ایم کے   برطانیہ  میں  رہائش  پذیر  رہنما  طارق میر  کےایک مبینہ  بیان سے   انکشاف  ہوا ہے  کہ متحدہ  قومی موومنٹ  بھارتی مفادات کے لئے کام  کرتی  رہی ہے  اس سلسلے میں پارٹی کو سالانہ آٹھ لاکھ پاؤنڈز  دئیے  جاتے   تھے۔ ایم کیو ایم کے رہنما  طارق میر نے تیس مئی  دوہزار بارہ کو اسکاٹ لینڈ یارڈ پولیس  کے سامنے  بیان  ریکارڈ کرایا،  بیان پندرہ گھنٹے اور  چونتیس منٹ کی  تفتیش کے  بعد  ریکارڈ کیا  گیا۔ جس کے مطابق ایم کیو ایم  انیس سو چورانوے سے بھارتی خفیہ ایجنسی را سے فنڈز لے رہی ہے رقم  سے   اسلحہ  خریدا  جاتا  اور کارکنوں کو   عسکری تربیت کے لئے  بھارت   بھیجا  جاتا  تھا ، طارق میر نے   بتایا کہ     را کے  افسروں  سے پہلی  ملاقا ت میں الطاف  حسین نے پندرہ  لاکھ  ڈالرز مانگے  تھے ،  پہلے   یہ  رقم  ڈالر میں ملتی   تھی ،بعد میں  برطانوی کرنسی   کی صورت میں   آٹھ لاکھ  پاونڈ لئے  جانے لگے،  اس خفیہ   فنڈ کا  الطاف  حسین،عمران  فاروق،محمد انور اور ان  کےعلاوہ  کسی کو علم نہیں  تھا،  را  سے  رابطے  کے لئے  محمد انورالطاف  حسین کے  فوکل پرسن  مقرر تھے۔ بھارتی  خفیہ  اہلکاروں  سے ملاقات کا وقت اور مقام   را  ہی  طے  کرتی  تھی ایئرٹکٹ اور رہائش کی ذمہ داری انہی کی تھی،اس سلسلے میں  مقررہ مقام  پر  جانے  سے پہلے وہ  کسی اور جگہ  جاتے ،تاکہ کسی کو شک نہ  ہو سکے طارق میر نے  بتایا کہ  را سے  پہلی ملاقات  اٹلی میں ہوئی  جس کے  لئے وہ  پہلے  جرمنی کے  شہر فرینکفرٹ   گئےجہاں  سے  روم   روانہ ہوئے طارق میر کے مطابق اس کے  بعد را کے اہلکاروں  سے  ویانا، زیورخ اور پراگ میں  بھی   ملاقاتیں ہوتی  رہیں پہلے رقم   نقد ملتی  تھی لیکن برطانوی ایئر پورٹ پر سختی کے  باعث  را کے  فنڈز مختلف ذرائع  سے ان کے اکاونٹس میں  منتقل ہونے  لگے۔ ملاقاتوں کے  دوران  پاکستانی سیاست، کراچی کی  صورتحال ، افغانستان اور طالبان کے معاملات پر اکثر گفتگو  ہوتی  رہتی تھی۔ جس کے  مینٹس  را  کے افسر    بھارتی  وزیراعظم کو  بھی فراہم کرتے  تھے۔