Saturday, December 10, 2022

اسلام آباد ہائیکورٹ نے لاپتہ عمرعبداللہ کیس کاتحریری فیصلہ جاری کردیا

اسلام آباد ہائیکورٹ نے لاپتہ عمرعبداللہ کیس کاتحریری فیصلہ جاری کردیا
اسلام آباد ( 92 نیوز )  اسلام آباد ہائیکورٹ نے وفاقی دار الحکومت  سے لاپتہ ہونے والے عمر عبد اللہ کیس کا تحریری فیصلہ جاری  کر دیا ۔ ہائی کورٹ نے سیکرٹری داخلہ، سیکرٹری دفاع اور آئی جی اسلام آباد کی آدھی تنخواہ کی کٹوتی کا حکم  سنا دیا ۔ داخلہ ، دفاع کے سیکرٹریز، آئی جی اسلام آباد ، جے آئی ٹی و دیگر افسران پر 20 لاکھ روپے جرمانہ عائد کر دیا۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے اسلام آباد سے لاپتہ عمر عبد اللہ کیس کا 11 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلہ جاری کر دیا ۔ عدالت نے سیکرٹری داخلہ ، سیکرٹری دفاع اور آئی جی اسلام آباد کی آدھی تنخواہ کی کٹوتی کا حکم سناتے ہوئے داخلہ ، دفاع کے سیکریٹریز، آئی جی اسلام آباد ، جے آئی ٹی و دیگر افسران کو 20 لاکھ روپے جرمانہ عائد کر دیا ۔ تفصیلی فیصلے میں جے آئی ٹی ،ایس ایچ او اور تفتیشی افسر کی بھی آدھی تنخواہ کی کٹوتی کا حکم  دیا گیا ، لاپتہ شخص کی بازیابی تک اکاؤنٹنٹ جنرل کی آدھی تنخواہ کی کٹوتی جاری رکھنے کا بھی حکم  دیا گیا ہے ۔ عدالتی فیصلے میں حکم دیا گیا ہے کہ جرمانہ اور تنخواہ کٹوتی کی رقم لاپتہ شخص کی بیوی کو ادا کی جائے گی ۔ عدالتی فیصلے کے مطابق چھ ماہ میں لاپتہ عبد اللہ کی عدم بازیابی میں مذکورہ افسران کا کیس وزیراعظم کو بھیجا جائے جبکہ وزیراعظم قانون کے مطابق محکمانہ کارروائی کا آغاز کریں ۔ عدالت نے شہریوں کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لئے اسلام آباد پولیس کی کارگردگی پر سوالیہ نشان اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ ادارے عدالتی حکم پر عملدرآمد کرنے میں ناکام رہے ہیں ۔