گوادر ائیرپورٹ کے لئے فنڈز جاری نہ ہونے پر منصوبہ تعطل کا شکار

۱۱ اکتوبر, ۲۰۱۷ ۲:۰۴ شام

اسلام آباد (92 نیوز) وفاقی حکومت سی پیک پر صرف دعوﺅں تک محدود رہی۔ کروڑوں روپے لگانے کے باوجود گوادر ایئرپورٹ سنسان ہی رہا اور رواں سال کوئی کام شروع نہ ہوسکا۔ چین اور وزارت منصوبہ بندی کی طرف سے فنڈز نہ ملنے پر کام لٹک گیا۔
اقتصادی راہداری کا اہم منصوبہ گوادر انٹرنیشنل ایئرپورٹ تعطل کا شکار ہو گیا۔ رواں سال کی پہلی سہ ماہی کے دوران ایک پیسہ بھی جاری نہیں کیا جاسکا۔
92 نیوز کو موصول ہونے والی سرکاری دستاویزات کے مطابق گوادر میں سی پیک منصوبے کے تحت انٹر نیشنل ائیر پورٹ کی تعمیر کے لئے 22 ارب 47 کروڑ 75 لاکھ روپے کا تخمینہ لگایا گیا۔ گزشتہ مالی سال 2015-16ء میں 67 کروڑ 90 لاکھ روپے لگائے گئے جبکہ رواں مالی سال2016-17ء کیلئے ایک ارب پچاس کروڑ روپے مختص کئے گئے۔ اس رقم میں ایک ارب چالیس کروڑ چین نے فراہم کرنی تھی جبکہ صرف 10 کروڑ پاکستان کے ذمے ہیں۔
تاہم 2016-17ء کے دوران کوئی کام شروع نہیں ہوسکا جس کی سب سے بڑی وجہ وزارت منصوبہ بندی اور چین کی طرف سے فنڈز کی عدم فراہمی ہے۔
رواں مالی سال2017-18ء کی پہلی سہ ماہی میں بھی گوادر انٹرنیشنل ایئرپورٹ کے لئے کوئی رقم فراہم نہیں کی گئی۔
ذرائع کے مطابق موجودہ وفاقی حکومت سی پیک سمیت دیگر امور میں صرف زبانی جمع خرچ اور دعوے کر رہی ہے جبکہ حقیقت اس کے برعکس ہے۔

تازہ ترین ویڈیوز