پاکستان کی جانب سے امریکی صدر کی مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش کا خیرمقدم


وزارت خارجہ ، پاک، چین ، مشترکہ اعلامیہ ، بھارتی ہرزہ سرائی ، مسترد
۲۷ فروری, ۲۰۲۰ ۴:۱۲ شام

 اسلام آباد (92 نیوز) پاکستان کی جانب سے امریکی صدر کی مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش کا خیرمقدم کیا گیا۔

ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے ہفتہ وار پریس بریفنگ میں تصدیق کی کہ دوحہ میں ہونے والے امریکا طالبان معاہدے میں پاکستان کی نمائندگی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کریں گے۔ پاکستان نے افغانستان میں امن کیلئے سہولت کاری کی ہے۔ امید ہے امریکہ طالبان معاہدے سے افغانوں کے درمیان ڈائیلاگ شروع ہو گا ۔ پاکستان کا افغان ری کنسٹرکشن میں اہم کردار ہے ۔

ترجمان نے امریکہ اور بھارت کے درمیان دفاعی معاہدے پر تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ پاکستان بھارت کی ریاستی دہشت گردی سے متاثر رہا ہے۔ کلبھوشن یادیو ریاستی دہشت گردی کی مثال ہے۔ بھارت سمیت کسی کوپاکستانی افواج اور عوام کی تیاری پر شک نہیں ہونا چاہئے۔ کسی بھی جارحیت کا منہ توڑ جواب دینے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

پریس بریفنگ میں کرونا وائرس کا تذکرہ بھی ہوا۔ عائشہ فاروقی نے بتایا وائرس سے نمٹنے کیلئے وفاقی اورصوبائی حکومتیں متحرک ہیں۔ انہوں نے ایران کی حکومت سے رابطوں کی تصدیق کی اور کہا تہران میں پاکستانی سفارتخانہ متحرک اور ہاٹ لائن نمبر مختص کر دئیے گئے ہیں۔ وزارت صحت کرونا وائرس کے معاملے پر بہت متحرک ہے۔ چین نے بھی مسئلے سے نمٹنے کیلئے بہتر اقدامات کئے۔

ترجمان دفتر خارجہ نے امریکی صدر کی جانب سے کشمیر پر ثالثی کی پیشکش کا خیر مقدم کیا اور کہا کہ کشمیر کی صورتحال پر عالمی برادری آگاہ ہو چکی ہے۔

تازہ ترین ویڈیوز

Oops, something went wrong.