پاکستان اسٹیل ملز کی زمین فروخت کرنے سے روک دیاگیا

پاکستان اسٹیل ملز زمین فروخت اسلام آباد ‏ ‏92 نیوز سپریم کورٹ ‏ وفاقی حکومت ‏
۱۸ نومبر, ۲۰۱۹ ۲:۳۳ شام

اسلام آباد ( 92 نیوز)  سپریم کورٹ نے وفاقی حکومت کو پاکستان اسٹیل ملز کی زمین فروخت کرنے سے روک دیا ،  جسٹس گلزار احمد نے ملز کی کارکردگی پر اظہار برہمی کرتے ہوئے  نوٹس لینے کا عندیہ دے دیا، ریمارکس دئیے کہ اپنی جیبیں بھرنے کیلئے اسٹیل ملز کو تباہ کیا گیا۔

وفاقی حکومت کی جانب سے ملازمین کو تنخواہوں کی ادائیگی کیلئے پاکستان اسٹیل ملز کی زمین فروخت کرنے کے ارادے پر پانی پھر گیا ، سپریم کورٹ میں ملازمین کو پرویڈنٹ فنڈ کی ادائیگی سے متعلق کیس کی سماعت جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کی ۔

سرکاری وکیل نے انکشاف کیا کہ پراویڈنٹ فنڈ کی ادائیگی کیلئے فنڈز نہیں ، ادائیگی کیلئے زمین فروخت کر رہے ہیں ۔

جسٹس گلزار احمد نے پاکستان اسٹیل ملز کی کارکردگی پر اظہار برہمی کرتے ہوئے نوٹس لینے کا عندیہ دے دیا ، ریمارکس دیے کہ یہ بہت بڑا ادارہ تھا ، سینکڑوں اسٹیل ملز اس کے توسط سے چلتی تھیں ، ملز میں گاڑیاں، ٹرک اور راکٹ تک بنتے تھےاور اب پیداوار صفر ہے ، اپنی جیبیں بھرنے کیلئے ادارے کو تباہ کیا گیا ۔

عدالت نے  وفاقی حکومت کو پاکستان اسٹیل ملز کی زمین فروخت کرنے سے روک دیا ، قرار دیا کہ ملز کی زمین عوام کی ملکیت ہے ، فروخت نہیں ہو سکتی ۔

عدالت نے وزارت صنعت و پیداوار کے اکاؤنٹس منجمد کرنے کے حکم کیخلاف حکومتی درخواست واپس لینے کی بنیاد پر خارج کر دی۔

تازہ ترین ویڈیوز