فیصل آباد ، سائنسدانوں نے زہریلے پانی کو پینے کے قابل بنانے کیلئے سستا طریقہ ڈھونڈ نکالا

۳۰ اگست, ۲۰۱۸ ۳:۳۴ شام

فیصل آباد (92 نیوز) زرعی یونیورسٹی آف فیصل آباد کے سائنسدانوں نے آرسینک زدہ زہریلے پانی کو صاف کرنے اور اسے پینے کے قابل بنانے کیلئے سستا طریقہ ڈھونڈ نکالا ہے۔

تربوز کے چھلکے کو استعمال کر کے پانی سے نوے فیصد تک زہریلے مادے ختم کئے جا سکتے ہیں۔

پانی کو صاف کرنے کے لیے تربوز کے چھلکوں سے بنائے ہوئے پاوڈر سے گزارا جاتا ہے جس سے پانی میں سے نوے فیصد سے زائد پانی آرسینک سے پاک ہو جاتا ہے اور پینے کے قابل بھی ۔

یہ کارنامہ اپنے نام کرنے کے لیے زرعی یونیورسٹی کے شعبہ سول اینڈ انوائیرمینٹل کے سائنس دانوں سے چار سال تک تجربات کیے اور بلآخر کامیابی سے ہمکنار ہوئے۔

آرسینک مشین کے موجد ڈاکٹر نبیل خان نیازی کہتے ہیں ملک بھر میں زیادہ تر لوگ آرسینک والا زہریلا پانی پی رہے ہیں جس سے ان کو کینسر جیسی بیماریاں لگ رہی ہے۔

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ چار کروڑ سے زائد لوگ آرسینک زدہ پانی پینے پر مجبور ہیں۔ اس ایجاد سے انہیں بھی صاف پانی میسر آ سکتا ہے۔

اساتذہ اور طلباء کی صلاحیتوں کا اعتراف کرتے ہوئے انہیں وسائل فراہم کئے جائیں تو پینے کے صاف پانی کا مسئلہ حل ہو سکتا ہے۔

تازہ ترین ویڈیوز