Wednesday, March 3, 2021
٩٢ نیوز انگلش آج کا اخبار براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی
٩٢ نیوز انگلش آج کا اخبار
براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی

فوجی قیادت کا نام لینا نواز شریف کا ذاتی فیصلہ ہے ، بلاول بھٹو

فوجی قیادت کا نام لینا نواز شریف کا ذاتی فیصلہ ہے ، بلاول بھٹو
November 6, 2020
اسلام آباد (92 نیوز) چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو نے کہا فوجی قیادت کا نام لینا نواز شریف کا ذاتی فیصلہ ہے۔ بلاول بھٹو زرداری نے بی بی سی اردو کو انٹرویو میں بتایا کہ ’پی ڈی ایم کے ایجنڈے کی تیاری کے وقت نواز لیگ نے اعلیٰ عسکری قیادت کا نام نہیں لیا تھا اور جب انھوں نے گوجرانوالہ کے جلسے میں نواز شریف کی تقریر میں فوجی قیادت کے براہ راست نام سنے تو انھیں ’دھچکا‘ لگا۔ بلاول کا کہنا تھا پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کا ہرگز یہ مطالبہ نہیں ہے کہ فوجی قیادت عہدے سے دستبردار ہو جائے۔ انہوں نے فوجی قیادت کا نام لینے یا اُن پر براہ راست الزام لگانے کو نواز شریف اور مسلم لیگ ن کا ’ذاتی اور پارٹی کا فیصلہ قرار دیا۔ چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا انہیں انتظار ہے کہ نواز شریف ثبوت سامنے لائیں گے یا پیش کرنا چاہیں گے۔ بلاول بھٹو زرداری کا مزید کہنا تھا کہ ملک جن مشکل حالات سے گزر رہا ہے اس میں دو ہی راستے ہیں، ایک تو یہ کہ ہم انتہا پسندانہ رویہ اختیار کریں اور ملک کو مزید مشکلات سے دوچار کر لیں جبکہ دوسرا یہ کہ ہم رکیں اور سوچیں کہ کس طرح آگے بڑھنا ہے۔ انہوں نے وزیر اعظم عمران خان کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا اور الزام عائد کیا کہ وہ اداروں کو اپنی ‘ٹائیگر فورس ‘کے طور پر استعمال کر رہے ہیں جس کی وجہ سے ادارے بدنام ہوتے ہیں۔ آئی جی سندھ کے مبینہ اغوا کے حوالے سے بلاول کا کہنا تھا انکوائری چل رہی ہے لیکن اس معاملے پر ان کا آرمی چیف سے دوبارہ رابطہ نہیں ہوا۔ بلاول بھٹو زرداری نے گلگت بلتستان میں جاری اپنی انتخابی مہم کے حوالے سے بی بی سی کو بتایا کہ وہ ان علاقوں میں اپنے منشور کے ساتھ گئے ہیں جہاں اس سے پہلے کوئی لیڈر نہیں گیا۔ انھوں نے وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے گلگت بلتستان کو عبوری آئینی صوبہ بنانے کے اعلان کو انتخابات سے قبل دھاندلی کے مترادف قرار دیا۔