بھارت بھر میں متنازعہ قانون کے خلاف خواتین کے احتجاجی مظاہرے جاری


بھارت بھارت متنازعہ قانون متنازعہ قانون نئی دہلی نئی دہلی92 نیوز 92 نیو شاہین باغ شاہین باغ
۱۹ جنوری, ۲۰۲۰ ۶:۱۶ شام

نئی دہلی ( 92 نیوز) بھارت بھر میں متنازعہ قانون کے خلاف خواتین کے مظاہرے جاری ہیں ، نئی دہلی کے شاہین باغ میں خواتین ڈٹ کر اپنی جگہ پر بیٹھی ہوئی ہیں۔ لکھنؤ اور کرناٹکا میں بھی خواتین کا احتجاج جاری ہے ۔

بھارت میں متنازعہ شہریت کے قانون کے خلاف مظاہرہ کرتی خواتین اس شعر کی عملی تصویر بن گئی ہیں۔

سبھی کا خون ہے شامل یہاں کی مٹی میں

کسی کے باپ کا ہندوستان تھوڑی ہے!

نئی دہلی کے شاہین باغ میں سرد ترین موسم کی پرواہ کیے بغیر خواتین جم کر اپنی جگہ بیٹھی ہوئی احتجاج کر رہی ہیں ، بالی وڈ اداکار سوشانت سنگھ  بھی مظاہرین سے اظہار یکجہتی کرنے ان کے پاس پہنچ گئے اور ان سے خطاب کیا۔اداکار سوشانت سنگھ کا کہنا تھا ہر باغ سے بغاوت نکلتی ہے ، یہ جلیانوالا باغ تھا اب اس کے بعد شاہین باغ آیا ہے۔

لکھنؤ کے کلاک ٹاور کے پاس بھی خواتین کا دھرنا جاری ہے۔ خواتین نے احتجاج کے دوران متنازعہ قانون کے خلاف شدید نعرے بازی کی۔

ریاست کرناٹکا کے شہر گلبرگہ میں بھی متنازعہ شہریت قانون کے خلاف مظاہرہ کیا گیا جس میں خواتین کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ مظاہرے میں ہر مذہب کی خاتون مودی حکومت کے خلاف سراپا احتجاج رہی۔

تازہ ترین ویڈیوز