آر ایس ایس 1925 میں وجود میں آئی ، نعرہ ہندوستان صرف ہندوؤں کا ہے ‏

آر ایس ایس
۱۸ اگست, ۲۰۱۹ ۹:۳۹ شام

اسلام آباد ( 92 نیوز)وزیراعظم عمران خان بار بار جس انتہا پسند تنظیم آر ایس ایس کا ذکر کرتے ہیں۔یہ تنظیم 1925  میں معرض وجود میں آئی جس کا نعرہ ہندوستان صرف ہندوؤں کا ہے ۔

راشٹریہ سویم سیوگ سنگھ ( آر ایس ایس )  بھارت کی ہندو انتہاپسند تنظیم ہے ، جسے 1925  میں اطالوی ڈکٹیٹر مسولینی سے متاثر ہوکر بنایا گیا۔اس تنظیم کا نظریہ ہےکہ ہندوستان صرف ہندوؤں کا ہے ،باقی سب غدار ہیں۔

راشٹریہ سویم سیوک سنگھ فرقہ ورانہ فسادات برپا کرنے میں سرِفہرست ہے، 1927کے ناگپور فسادات میں اسی تنظیم کا اہم کردار تھا، جبکہ 1948 میں مہاتما گاندھی کا قتل بھی آر ایس ایس کے غنڈے نتھورام نے کیا تھا۔

سال 1969 کے احمد آباد اور 1989 کے جمشید پور فرقہ وارانہ فسادات بھی آر ایس ایس کی کارستانی تھے، چھ دسمبر 1992 کو بابری مسجد کی شہادت میں بھی یہی تنظیم ملوث تھی۔

آر ایس ایس کو فرقہ وارانہ فسادات میں چھ سے زائد بار سرکاری طور پر ملوث قرار دیا جاچکا ہے ، جن میں مالیگاؤ بم دھماکہ، حیدرآباد مکہ مسجد بم دھماکہ، اجمیر بم دھماکہ اور سمجھوتہ ایکسپریس بم دھماکہ شامل ہیں۔

وزیراعظم نریندر مودی ابتدا سے ہی آر ایس ایس کے نظریات سے متاثر رہے ہیں اور صرف آٹھ سال کی عمر میں آر ایس ایس کا حصہ بنے۔بطور وزیراعلیٰ نریندر مودی کے ہاتھوں گجرات میں مسلمانوں کی تباہی زبان زد عام ہے۔

بی جے پی کی حکومت بھارت میں آر ایس ایس کے ہندتوا نظریے کے پرچار کےساتھ ساتھ اقلیتوں خصوصاً مسلمانوں پر زندگی تنگ کررہی ہے ، بھارت کا پڑھا لکھا طبقہ بھی ہندو انتہا پسندوں کے بڑھتے اثرو رسوخ کو نہ صرف ہمسائے ممالک بلکہ خود بھارت کیلئے بھی زہر قاتل قرار دے دے رہا ہے۔

جرمن سب سے اعلیٰ نسل سے تعلق رکھتے ہیں، دنیا کے دیگر طبقات ان کی غلامی کیلئے پیدا ہوئے ہیں، یہ ہیں وہ نظریات جنہوں نے ہٹلر کے زیر اثر جرمن قوم کی سوچ کو انتہاپسندی میں تبدیل کیا۔

پہلی جنگ عظیم کے مجرم جرمنی پر 1919 کے ورسیلز معاہدے کے تحت سخت پابندیاں لگائی گئیں جن کو بنیاد بنا کر آمر ہٹلر نے جرمن قوم کے جذبات سے کھیلا۔

آسٹریا نے ایڈولف ہٹلر کی پیدائش گاہ کو گرانے کا فیصلہ کر لیا

سال 1945 میں دوسری جنگ عظیم میں جرمنی کی شکست اور ہٹلر کی خودکشی کیساتھ ہی نازی ازم کے ناسور کا خاتمہ ہوا  لیکن یہی انتہاپسندی کا نظریہ دیگر قومیت پسند تنظیموں کیلئےایک مثال بن گیا۔

بھارت کی آر ایس ایس بھی انھی نظریات پر پروان چڑھنے والی انتہا پسند تنظیم ہے  جو ہٹلر کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اپنے ملک کی ہر اقلیت کے خون کی پیاسی بن چکی ہے۔

ایڈولف ہٹلر کا فون دو لاکھ 43 ہزار ڈالر میں فروخت ہو گیا

مودی مقبوضہ کشمیر کی مسلم اکثریت کو اقلیت میں بدلنے کیلئے ہٹلر کے نقش قدم پر چل رہے ہیں  جس نے 1933 میں اقتدار سنبھالنے کے بعد پڑوسی ممالک پر حملوں کا اغاز کیا ، جرمنی کی سرحدوں کو پھیلانے کیلئے لاکھوں معصوم لوگوں کا قتل عام کیا گیا۔

ایڈولف ہٹلر کا فون خریدنے والے کے ڈھائی لاکھ ڈالر ڈوب گئے

تازہ ترین ویڈیوز