Monday, January 18, 2021
٩٢ نیوز انگلش آج کا اخبار براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی
٩٢ نیوز انگلش آج کا اخبار
براہراست نشریات(UK) براہراست ٹی وی

کرسی بھی چھوڑنا پڑی تو چھوڑ دوں گا مگر این آر او نہیں دونگا،و زیر اعظم

کرسی بھی چھوڑنا پڑی تو چھوڑ دوں گا مگر این آر او نہیں دونگا،و زیر اعظم
December 5, 2020

اسلام آباد (92 نیوز) وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ کرسی بھی چھوڑنی پڑی تو چھوڑ دوں گا لیکن این آر او نہیں دونگا۔ یپلزپارٹی اور نون لیگ کو مشرف نے این آر او دیا، ان این آر اوز سے ملک کو بہت نقصان ہوا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ اس ملک میں  30سال سے پیسے چوری کئے جا رہے ہیں جس کا سب کو علم ہے ،  انگلینڈ میں کسی پر عوام کا پیسہ چوری کرنے کا الزام  لگ جائے تو وہ  نہ کسی پارلیمنٹ میں جا سکتا ہے نہ میڈیا کے سامنے ، وہ جانتا ہے کہ میڈیا اس کے ساتھ وہ کرے گا جو اسحاق ڈار کیساتھ  ہوا۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ  لاہور میں کورونا کیسز تیزی سے بڑھ رہے ہیں،جلسے کی بالکل اجازت نہیں دیں گے، جو ساؤنڈسسٹم لگائے گا، کرسیاں لگائے گا، سب کے خلاف ایف آئی آر کاٹیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ نو آبادیاتی نظام میں غلامی کی سوچ پروان چڑھتی ہے، مشرقی اور مغربی معاشرے  کو قریب سے دیکھنے سے میرے اندر تبدیلی آئی۔مجھ پر کسی انسان کا اثر نہیں ہے، میں نے انگلینڈ میں  ایک بہت بڑی فلاحی ریاست دیکھی،مغرب میں فلاحی ریاست کا تصور انسانیت کا تصور ہے،فلاحی ریاست انسانیت پر مبنی ہوتی ہے،وہاں غریبوں کو برابر کے حقوق ہیں،وہاں کا نظام انسانیت کو تحفظ فراہم کرتا ہے ،ہمارے ہاں خاندانی نظام تحفظ دیتا ہے،اسلام میں یہ بڑی اچھی بات ہے کہ دوسروں کے اور اپنے گناہوں پر پردہ ڈالنے کا حکم ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ کالونی ازم میں آپ میں غلامی کی سوچ پروان چڑھتی ہے،ہم جتنا مغرب کی روایات اپناتے رہیں گے،ہمارا نظام بھی تباہ ہوتا جائے گا،بھارت کی بالی ووڈ نے مغرب کا کلچر آیا تو وہاں بھی تباہی آنا شروع ہوگئی ۔ ہمیں علامہ اقبال کی تعلیمات کی طرف جانا ہے،علامہ اقبال ایک روشن ذہن انسان تھے،انہوں نے لوگوں کو ایجوکیٹ کرنے کی کوشش کی ۔

وزیر اعظم نے کہا کہ  میرا رول ماڈل حضرت محمد ﷺ کی ذات ہے، ہم سیرت نبوی ﷺ پر سرگودھا یونیورسٹی میں پی ایچ ڈی شروع کر رہے ہیں ، ہم  صوفی ازم پر یونیورسٹی بنارہے ہیں،جس پر سیرت اور صوفی ازم پرپی ایچ ڈی کروائی جائے گی، مدارس میں بھی ہم جدید تعلیم کو متعارف کروارہے ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ملک میں جنسی کرائم بہت تیزی سے بڑھ رہے ہیں، ریپ کے ملزموں کے لیے عبرتناک سزائیں لے کر آئے ہیں، جنسی جرائم  کا خاتمہ سزاؤں سے نہیں معاشرے کی تربیت سے ہوتا ہے۔